خورشید شاہ اور فاروق ستار کے بیانات لسانی فسادات اور سندھ میں عصبیت اور نفرتیں پیدا کرنے کی گھناؤنی سازش نامی فلم کا پارٹ ٹو ہے،رضا ہارون

ایک روز قبل اس سازش کی دوسری قسط سندھ اسمبلی میں پیش کی گئی جہاں وزیراعلیٰ اور اپوزیشن لیڈر نے سندھی اور مہاجر کا کارڈ بھرپور طریقے سے استعمال کیا

بدھ مئی 23:46

کراچی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 23 مئی2018ء) خورشید شاہ اور فاروق ستار کے بیانات لسانی فسادات اور سندھ میں عصبیت اور نفرتیں پیدا کرنے کی گھناؤنی سازش نامی فلم کا پارٹ ٹو ہی. ایک روز قبل اس سازش کے دوسری قسط سندھ اسمبلی میں پیش کی گئی جہاں لیڈر آف اپوزیشن اور لیڈر آف ہاؤس نے سندھی اور مہاجر کا لسانی کارڈ بھرپور طریقے سے استعمال کیا گیا اور آج اسی سازش کی اگلی قسط کے طور پر فاروق ستار اور خورشید شاہ میدان میں اترے ہیں تاکہ اگلا الیکشن بھی نفرتوں اور عصبیت کی بنیاد پر اِدھر ہم اُدھر تم کا نعرہ لگا کر جیتا جا سکی.

پی پی پی اور ایم کیو ایم دونوں عوام کی خدمت کرنے اور صوبے کی ترقی میں بری طرح ناکام ہو چکی ہیں. ان خیالات کا اظہار پاک سر زمین پارٹی کے سیکریٹری جنرل رضا ہارون نے حالیہ پیدا ہونے والی صورتحال پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کیا. انہوں نے کہا کہ پانچ برس تک ان دونوں جماعتوں کو عوام کے حقوق اور سندھ دھرتی کی عزت اور احترام کا خیال تک نہیں آیا۔

(جاری ہے)

سندھ میں لوگوں کے پاس پینے کا صاف پانی تک دستیاب نہیں، کچرا گلیوں سے اٹھ نہیں رہا، تعلیم کا معیار پست ہے اور عوام کو بنیادی صحت کی سہولیات میسر نہیں ہیں اور اس کی تمام تر ذمہ داری پی پی پی اور ایم کیو ایم پر عائد ہوتی ہی.

انہوں نے کہا کہ عوام اپنے اتحاد سے نفرتوں اور تعصب کی سیاست کو ناکام بنا دیں اور سیاست کے نام پر عوام کو لڑانے والی جماعتوں کو مسترد کر دیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ عوام کو بنیادی حقوق مہیا کرنے میں ناکام جماعتیں آئین کے تحت مقامی حکومتوں کو بااختیار کرنے میں ناکام رہی ہیں۔