سابق عراقی صدرصدام حسین کی کشتی کو پائلٹس کی آرام گاہ میں تبدیل کردیاگیا

صدام حسین نے 82میٹر طویل کشتی اپنے لیے تیارکروائی تھی تاہم وہ کبھی اس میں سوار نہ ہوسکے،عرب ٹی وی

جمعرات مئی 12:14

سابق عراقی صدرصدام حسین کی کشتی کو پائلٹس کی آرام گاہ میں تبدیل کردیاگیا
بغداد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 24 مئی2018ء) سابق عراقی صدرصدام حسین اپنے لیے تیار کشتی میں خود کبھی سوار نہ ہوسکے تاہم اب وہ پائلٹس کی آرام گاہ میں تبدیل ہونے جارہی ہے۔عرب ٹی وی کے مطابق1981 میں تیار کی گئی کشتی کو بصرہ بریز( بصرہ) کی ہواکا نام دیا گیا تھا جس کی تزئین و آرائش دیکھنے سے تعلق رکھتی ہے۔بیاسی میٹر طویل محل نما کشتی جس میں عالیشان بیڈروم، ڈائننگ روم، اور مہمانوں کیلیے سترہ کمرے ہیں ، صدام حسین نے اپنے لئے تیار کروائی تھی۔

ہمیشہ عراق سے دور رہنے کے باعث صدام اس کشتی میں سوار نہ ہوسکے۔

(جاری ہے)

اس کشتی پرکبھی سعودی عرب کا قبضہ رہا، پھر اردن کے ہاتھ لگ گئی، عراق کو واپس ملی تو صدام حیات نہ رہے ۔حکومت اس کے خریدار کو تلاش کرنے میں ناکام رہی،گزشتہ دو سالوں سے یہ کشتی یونیورسٹی کا کردار ادا کر رہی ہے،سمندری زندگی کے بارے میں تحقیق کرنے والے یہاں آتے ہیں۔کشتی کے کیپٹن کا کہنا تھا کہ یہ صدارتی کشتی اچھی حالت میں ہے، اس کے دو انجن اور جنریٹر بلکل صحیح کام کر رہے ہیں،وقتاً فوقتاً اس کی دیکھ بھال کی ضرورت ہے۔بصرہ کی بندرگاہ کو ایک اسٹیشن کی ضرورت ہے جہاں سمندری پائلٹ آرام کرسکیں لہذاحکام نے اسے پائلٹس کی آرام و تفریح کیلیے ہوٹل میں تبدیل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔