ایم ایم اے نے انتخابی نشان ’’کتاب‘‘‘ کیلئے الیکشن کمیشن میں درخواست جمع کرادی

نگران وزیر اعظم کے انتخاب پر اتفاق رائے نہ ہونا افسوسناک،ملک میں شفاف انتخابات کیلئے پوری قوم کی نظریں الیکشن کمیشن پر ہیں ،ملک میں بلا امتیاز احتساب بے ضروری ہے پانامہ لسٹ میں شامل دیگر ناموں کے بارے میں تحقیقات نہ ہونے سے شکوک و شبہات پیدا ہورہے ہیں،لیاقت بلوچ

جمعرات مئی 16:50

سلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 24 مئی2018ء) متحدہ مجلس عمل کے جنرل سیکرٹری لیاقت بلوچ نے کہاہے کہ حکومت اور اپوزیشن میں نگران وزیر اعظم کے انتخاب پر اتفاق رائے نہ ہونا افسوسناک امر ہے لگتا ہے کہ اس معاملے کو بھی الیکشن کمیشن حل کرے گا ،،ایم ایم اے نے انتخابی نشان کتاب کے حصول کیلئے الیکشن کمیشن میں درخواست جمع کرادی ہے ،ملک سے کرپشن کا خاتمہ ،،تعلیم روزگار ، صحت اور قومی سلامتی اولین ترجیحات میں شامل ہیں ،ملک میں شفاف انتخابات کیلئے پوری قوم کی نظریں الیکشن کمیشن پر ہیں ،ملک میں بلا امتیاز احتساب بے ضروری ہے پانامہ لسٹ میں شامل دیگر ناموں کے بارے میں تحقیقات نہ ہونے سے شکوک و شبہات پیدا ہورہے ہیں ان خیالات کا اظہار انہوں نے الیکشن کمیشن کے باہر میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کیا اس موقع پر ان کے ہمراہ ایم ایم اے کے دیگر رہنما بھی موجود تھے ۔

(جاری ہے)

لیاقت بلوچ نے کہاکہالیکشن کمیشن نے سیاسی جماعتوں سے انتخابی نشانات کے لیے درخواستیں طلب کی تھیں اگلے عام انتخابات کے لیے متحدہ مجلس عمل میں شامل تمام جماعتوں نے ایک انتخابی نشان کتاب کے لیے درخواست جمع کرائی ہے انہوںنے کہاکہ پورے ملک میں متحدہ مجلس عمل کی ضلعی تنظیمیں قائم ہو چکی ہیں ایم ایم اے کے بنیادی نکات میں کرپشن کا خاتمہ، تعلیم روزگار اور صحت سب کے لیے اور قومی سلامتی کی حفاظت بھی ایم ایم اے کا ہدف ہے انہوں نے کہاکہ اقلیتوں کے حقوق کی حفاظت کرنا بھی ہمارے بنیادی مقاصد میں شامل ہے لیاقت بلوچ نے کہاکہ متحدہ مجلس عمل کے قیام سے پاکستان کی مفاد پرست اور کرپٹ سیاست کا خاتمہ ہو گا ہم محب دین ووٹرز کو تقسیم نہیں ہونے دیں گے بلکہ متحد کریں گے انہوں نے کہاکہ مینار پاکستان،، مردان اور قلات میں متحدہ مجلس عمل نے عظیم الشان جلسے منعقد کیے ہیں جبکہ رمضان میں قرآن کانفرنس کے ذریعے عوام سے رابطے میں رہیں گے انہوںنے کہاکہ وزیراعظم اور اپوزیشن لیڈر میں نگران وزیراعظم کے لیے اتفاق نہیں ہو رہا ہے اور لگتا ہے کہ یہ معاملہ بھی پارلیمانی کمیٹی سے آگے جاکر الیکشن کمیشن پر ختم ہوگا انہوںنے کہاکہ شفاف انتخابات کے لیے الیکشن کمیشن اور اعلی عدلیہ سے پوری قوم کی توقعات ہیں ہم چاہتے ہیں سب کا احتساب ہونا چاہیے پانامہ لسٹ میں شامل باقی لوگوں کے خلاف کاروائی نہ ہونا شکوک وشبات پیدا کر رہا ہے انہوں نے کہاکہ متحدہ مجلس عمل پوری قوم کے لیے امید نو ہے ۔

۔۔اعجاز خان ۔