پیپلزپارٹی بھی پرویزمشرف کیخلاف کھل کرمیدان میں آگئی

پرویزمشرف آرٹیکل6 کےہی نہیں محترمہ کےقتل کے مقدمے میں بھی ملزم ہے،میاں صاحب سچے ہیں تو ہمت کریں وزیراعظم کو کہیں کہ مشرف کو واپس لائیں۔ترجمان پیپلزپارٹی مولا بخش چانڈیوکا ردعمل

sanaullah nagra ثنااللہ ناگرہ جمعہ مئی 14:49

پیپلزپارٹی بھی پرویزمشرف کیخلاف کھل کرمیدان میں آگئی
کراچی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 25 مئی2018ء) : پاکستان پیپلزپارٹی بھی جنرل(ر))پرویز مشرف کیخلاف کھل کرمیدان میں آگئی ہے،پرویزمشرف آرٹیکل6 کے ہی نہیں محترمہ بےنظیربھٹوکےقتل کے مقدمے میں بھی ملزم ہے،میاں صاحب سچے ہیں تو ہمت کریں وزیراعظم کو کہیں کہ مشرف کو واپس لائیں۔ترجمان پیپلزپارٹی مولا بخش چانڈیو نے سابق وزیراعظم نوازشریف کے پرویز مشرف سے متعلق بیان کے ردعمل میں کہا کہ میاں صاحب نے پہلے مشرف پر بغاوت کا مقدمہ بنایا اورپھر ڈیل کرلی۔

نواز شریف ڈیل ماسٹر ہیں، ان کا ہر قدم ڈیل کرنے اور خود کو بچانے کیلیے ہوتا ہے۔ میاں صاحب کا آدھا سچ نہیں چلے گا، سچ بولنا ہے تو پورا بولیں۔ انہوں نے کہا کہ پرویزمشرف آرٹیکل6 کے ہی نہیں محترمہ بے نظیربھٹوکے قتل کے مقدمے میں بھی ملزم ہے۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ میاں صاحب بتائیں سنگین بغاوت کے ملزم کو بھگانے کے عوض کیا لیا گیا؟ میاں صاحب یہ کہنا کافی نہیں کہ سب مشرف پر مقدمہ چلانے کی وجہ سے ہو رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ نوازشریف نے مشرف کو خود بھگایا اب الزام دوسروں پرلگا رہے ہیں۔ چند دن کی سہی حکومت مسلم لیگ ن کی ہے، مشرف کو واپس کیوں نہیں لایا جاتا۔ میاں صاحب سچے ہیں تو ہمت کریں وزیراعظم کو کہیں کہ مشرف کو واپس لائیں۔ واضح رہے سابق وزیراعظم محمد نواز نےایون فیلڈ ریفرنس کی سماعت کے موقع پر احتساب عدالت میں صحافیوں سے غیر رسمی گفتگو کرتے ہوئے نواز شریف نے کہا کہ پرویز مشرف کی ٹرائل سے جان نہیں چھوٹ سکتی ،ْآج یا 6 ماہ بعد لیکن مشرف ٹرائل انجام تک پہنچے گا۔

سابق وزیراعظم نے کہا کہ مشرف ٹرائل اوپن اینڈ شًٹ کیس ہے اسی لیے موصوف پاکستان نہیں آرہے تاہم اس طرح کے مقدمے واپس ہو ہی نہیں سکتے، یہ سنگین غداری کیس ہے ،ْ ایک وزیراعظم 70،70 پیشیاں بھگت رہا ہے اور ڈکٹیٹر مفرور ہے۔۔نواز شریف نے کہا کہ پرویز مشرف مٴْکے دکھاتا تھا اور کہتا تھا یہ ہے طاقت۔ انہوں نے 12 مئی 2007 کو اسلام آباد جلسے میں کراچی میں آزمائی گئی طاقت کا اظہار کیا اور پارلیمنٹ آئے تو آخر میں مٴْکا لہرایا۔

سابق وزیراعظم نے کہا کہ کہاں گیا وہ مٴْکا، بزدلی سے جو باہر بیٹھا ہے بہتر ہے وہ مٴْکا اپنے منہ پر مارتا۔چیئرمین تحریک انصاف پر تنقید کرتے ہوئے نواز شریف نے کہا کہ عمران خان نے پارلیمنٹ کیلئے لعنت کا لفظ استعمال کیا ،ْجس کو لعنت بھیج رہے ہیں، جس سے پورا فائدہ اٹھایا اگر یہ غیر پارلیمانی نہیں ہے تو اسے کہتے ہیں تھوک کر چاٹ رہے ہیں۔

نواز شریف نے کہا کہ عمران خان پارلیمان سے متعلق اپنے الفاظ اور عمل کی وضاحت خود دیں گے۔۔نواز شریف نے کہا کہ سابق ڈی جی آئی ایس آئی لیفٹیننٹ جنرل ریٹائرڈ اسد درانی کی کتاب میں ہونے والے انکشافات ایسا ایشو ہے جس پر بات ہونی چاہیے۔ نواز شریف نے اسدد رانی کی کتاب میں انکشاف پر قومی کمیشن بنانے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ ایک قومی کمیشن بنے جو ان سب معاملات کی تفتیش کرے۔

میں سمجھتا ہوں اس معاملے پر بھی اجلاس بلایا جانا چاہیے۔ دوبارہ حکومت میں آئے تو اس معاملے پر قومی کمیشن بنائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ صرف یہی نہیں پہلے بھی کئی معاملات گزرے جن پر کمیشن بننا چاہیے۔ بلوچستان حکومت کا تختہ الٹنے اور سینیٹ میں پیپلزپارٹی، پی ٹی آئی کی ووٹنگ پر بھی کمیشن بننا چاہیے، حکومت کے چند دن رہ گئے، اب کمیشن نہ بنا تو کچھ عرصہ بعد بنے گا۔

نوازشریف نے کہاکہ واجد ضیاء پرویز مشرف کے فارم ہائوس کے باہر بیٹھ کر واپس آجاتے تھے ،ْ مجھے واجد ضیاء نے اپنے دفتر بلایا اور میں بطور وزیراعظم پیش ہوتا رہا،حساب کتاب کا وقت آگیا ، میں نے 70 پیشیاں بھگت کر مثال قائم کردی ہے۔سابق وزیر اعظم نے کہا کہ ملک میں ایک وقت میں دو تین متوازی حکومتیں نہیں چل سکتیں، کون ہے جو بندے توڑ کو دوسری جماعتوں میں شامل کرارہا ہے، کون ہے جو ایک ترمیم میں ووٹ نہ دینے کے لئے اسمبلیوں میں جانے سے روکتا ہے، ایک کمیشن بننا چاہیے جو ملک کے ساتھ ہونے والے تمام سانحات کی تحقیق کرے، بلوچستان حکومت کا تختہ الٹنے پر بھی کمیشن بننا چاہئے ہماری حکومت آئی تو قومی کمیشن بنائیں گے، قومی کمیشن اس حکومت میں نہ بنا تو کچھ عرصہ بعد بن جائیگا لیکن بننا تو ہے ،ْ میں یقین رکھتا ہوں تو کہہ رہا ہوں۔

اب معاملات آگے بڑھیں گے، پیچھے نہیں جائیں گے، یہ اکیسویں صدی ہے۔۔نواز شریف نے کہا کہ ہم نے پانچ سال پورے ہونے سے پہلے عوام سے کیے وعدے پورے کردئیے، سی پیک آصف زرداری صاحب کا منصوبہ تھا تو ان کے دور میں شروع کیوں نہیں ہوا، فاٹا ریفارمز ان کا ایجنڈا تھا تو ان کی حکومت نے کیوں نہیں کیں، ہم سی پیک لے کر آئے اب اس میں بھی خلل پڑ رہا ہے، دیگر منصوبے بھی سست روی کا شکار ہوگئے۔

نگراں وزیراعظم کے نام پر نوازشریف نے کہا کہ نگران وزیراعظم کا نام کیوں فائنل نہیں ہوا، اگراتفاق رائے نہ ہوا تو معاملہ پارلیمنٹ میں جائیگا۔ صحافی کی جانب سے نوازشریف سے پوچھا گیا کہ فاٹا کا انضمام ہو گیا کیا اس سے آپ کے اتحادی ناراض تونہیں جس پرنوازشریف نے کہا کہ میرا خیال ہے جو سوال ہورہے ہیں اسی میں رہیں۔ایک سوال پر نوازشریف نے کہا کہ کون ہے جو پارٹی کے لوگوں کو توڑتا ہے قوم اب سب باتوں کو نوٹ کریگی۔ میں صرف سیاسی معاملات نہیں، بنیادی حقوق پر بھی بات کرتا ہوں، شاہد خاقان عباسی نے جس طرح 10 ماہ گزارے ان کی ہمت ہے۔