شمالی بغداد کے پارک میں خودکش حملہ، سات افرادہلاک،متعددزخمی

حملہ آور پارک کے عین وسط میں پہنچ جانے میں کامیاب ہو جاتا تو ہلاکتوں اور زخمیوں کی تعداد کہیں زیادہ ہوتی،پولیس

جمعہ مئی 15:56

بغداد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 25 مئی2018ء) عراقی دارلحکومت بغداد کے پرہجوم پارک میں خودکش حملہ آور کے دھماکے سے سات افراد ہلاک ہوگئے ،ایک ہفتہ قبل شروع ہونے والے رمضان المبارک کے بعد بغداد میں ہونے والا یہ پہلا دھماکا ہے۔ عرب ٹی وی کے مطابق پولیس نے بتایا کہ ایمرجنسی رضاکاروں نے خود کش بمبار کو شوعلہ پارک میں داخلے کے وقت روکا، تاہم اس نے پہلے ہی خود کو دھماکے سے اڑا لیا۔

یہ پارک شمالی عراق کے شیعہ اکثریتی علاقے میں واقع ہے۔میڈیا سے بات نہ کرنے کے مجاز حکام نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ اس خوفناک حملے کے نتیجے میں سولہ افراد شدید زخمی ہوئے لیکن اگر حملہ آور پارک کے عین وسط میں پہنچ جانے میں کامیاب ہو جاتا تو ہلاکتوں اور زخمیوں کی تعداد کہیں زیادہ ہوتی۔

(جاری ہے)

واضح رہے کہ رمضان االمبارک میں بغداد کے ریستوران، کیفے اور تجارتی علاقے افطاری کے فورا بعد لوگوں سے کھچا کھچ بھرے ہوتے ہیں اور اسی طرح سحری کے وقت بھی ان علاقوں کا ایسا ہی منظر ہوتا ہے۔

اس خوفناک دھماکے کی ذمہ داری تاحال کسی شدت پسند گروپ نہیں قبول نہیں کی ہے۔ واضح رہے کہ عراق پر امریکی فوجی حملے کو پندرہ سال ہونے کو ہیں اور اس تمام عرصے میں تقریبا روزانہ ہی شدت پسند حملے کرتے ہیں۔ داعش کی کمین گاہیں شمالی اور جنوبی عراق میں موجود ہیں جہاں شدت پسند سیکورٹی فورسز کو نشانہ بناتے ہیں۔