قومی اسمبلی کا ایک اور اجلاس کورم کی نذر ہوگیا

غلام احمد بلورکے نکتہ اعتراض پر بات کرنے کے دوران نسیمہ حفیظ پانیزئی نے کورم کی نشان دہی کر دی ، دوبارہ اجلاس شروع ہونے پر بھی ارکان کی مطلوبہ تعداد پوری نہ ہوئی م اجلاس پیر کی سہ پہر تین بجے تک کے لئے ملتوی کردیا گیا

جمعہ مئی 19:33

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 25 مئی2018ء) قومی اسمبلی کا ایک اور اجلاس کورم کی نذر ہوگیا ، غلام احمد بلورکے نکتہ اعتراض پر بات کرنے کے دوران نسیمہ حفیظ پانیزئی نے کورم کی نشان دہی کر دی ، دوبارہ اجلاس شروع ہونے پر بھی ارکان کی مطلوبہ تعداد پوری نہ ہوئی جس کے باعث قومی اسمبلی کا اجلاس پیر کی سہ پہر تین بجے تک کے لئے ملتوی کردیا گیا۔

قومی اسمبلی کا اجلاس پیر کی سہ پہر تین بجے تک کے لئے ملتوی کردیا گیا۔

(جاری ہے)

جمعہ کو قومی اسمبلی کا اجلاس سپیکر سردار ایازصادق کی صدارت میں ہوا ، عوامی نیشنل پارٹی کے رہنماء غلام احمد بلور نے جیسے ہی نکتہ اعتراض پر بات کرنے کا آغاز کیا تو پختونخوا ملی عوامی پارٹی کی رکن اسمبلی نسیمہ حفیظ پانیزئی نے کورم کی نشان دہی کر دی ، سپیکر نے ان سے کورم کی نشاندہی نہ کر نے کی درخواست کی تاہم انھوں نے پھر بھی کورم کی نشاندہی کی ،کورم پورا نہ ہونے کی وجہ سے اجلاس کورم ہونے تک کے لئے ملتوی کر دیا گیا ،جلاس کچھ دیر بعد دوبارہ شروع ہوا تو اجلاس کی صدر نشیں آسیہ ناصر نے گنتی کا حکم دیا۔

گنتی کرنے پر ارکان کی مطلوبہ تعداد نہ ہونے پر قومی اسمبلی کا اجلاس پیر کی سہ پہر تین بجے تک کے لئے ملتوی کردیا گیا۔