صوبہ میں تحریک انصاف حکومت کی پانچ سالہ کارکردگی عام آدمی کی نظرمیں صفر ہے، سلطان العارفین جدون

جمعہ مئی 22:48

حویلیاں۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 25 مئی2018ء) خیبر پختونخوا میں تحریک صوبہ ہزارہ کی آرگنائزنگ کمیٹی کے سربراہ سلطان العارفین جدون نے کہا ہے کہ تحریک انصاف کی پانچ سالہ حکومتی کارکردگی صوبہ کے عام آدمی کی نظرمیں صفر ہے، پی ٹی آئی کی حکومت صحت، تعلیم،، بے روزگاری، مواصلات، بلدیات غرض یہ کہ ہر شعبہ میں ناکام رہی ہے، زبانی جمع تفریق تک ٹھیک رہی ہے، ایک بار پھر عام آدمی کی ہمدردیاں حاصل کرنے کیلئے لاہور جلسہ میں 11 نکاتی پروگرام میں پسے ہوئے پاکستانی کے مسائل کو نظرانداز کیا گیا، صوبہ میں تمام ادارے تباہ کر دیئے گئے ہیں۔

وہ جمعہ کو یہاں ایک مشاورتی اجلاس سے خطاب کر رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ زلزلہ سے تباہ حال سکولز اور بنیادی صحت مراکز پرکوئی توجہ نہیں دی گئی، بچے کھلے آسمان تلے اپنی تعلیم جاری رکھنے پر مجبور ہیں، صوبائی حکومت جو تبدیلی کا نعرہ لگا رہی تھی اس حکومت نے پھر سابقہ روایات برقرار رکھتے ہوئے ہزارہ کے مسائل پر توجہ دینے کی تکلیف گوارا نہیں کی۔

(جاری ہے)

سلطان العارفین نے کہا کہ عمران خان کے 11 نکات میں جنوبی پنجاب صوبہ کو بھی سیاسی ہمدردیاں حاصل کرنے کیلئے شامل کیا ہے، جنوبی پنجاب کی محرومیاں بھی ہزارہ سے کم نہیں ہیں، دور دراز علاقوں پر کسی بھی حکومت نے توجہ نہیں دی، وقت آ گیا ہے کہ اس جنوبی پنجاب،، ہزارہ اور بہاولپور کو فوری طور پر صوبوں کا قیام لایا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ہزارہ کی محرومیوں اور حقوق کیلئے صوبہ ہزارہ کے قیام کی جدوجہد میں بے گناہ معصوم 7 ہزارے والوں کو ریاستی دہشت گردی کے ذریعہ شہید کیا گیا، صوبہ ہزارہ کی تحریک میں شہداء کا خون بھی شامل ہے، کمزور اور بے ساکیوں پر چلنے والی حکومتوں نے کالا باغ ڈیم جیسے قومی مفاد کے منصوبہ کو پس پشت ڈال دیا، اسی طرح جنوبی پنجاب پر ساری جماعتیں سیاست کر رہی ہیں، الله کرے اسی سیاست میں جنوبی پنجاب کو ان کا حق مل جائے، اگر ہزارے وال کے حقوق کو سنجیدگی سے حل نہ کیا گیا تو پھر سوچ سمجھ کر ہزارہ آنے کی جرات کریں۔