اسد درانی متنازعہ کتاب لکھنے کے بعد بڑی مصیبت میں پھنس گئے

پاک فوج کے سابق افسران نے بھی اسد درانی کے خلاف سخت ایکشن لینے کا مطالبہ کر ڈالا

Syed Fakhir Abbas سید فاخر عباس ہفتہ مئی 00:25

اسد درانی متنازعہ کتاب لکھنے کے بعد بڑی مصیبت میں پھنس گئے
راولپنڈی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 25 مئی2018ء) اسد درانی متنازعہ کتاب لکھنے کے بعد بڑی مصیبت میں پھنس گئے۔ پاک فوج کے سابق افسران نے بھی اسد درانی کے خلاف سخت ایکشن لینے کا مطالبہ کر ڈالا۔تفصیلات کے مطابق سابق آئی ایس آئی چیف اسد درانی کی جانب سے اپنی تازہ ترین کتاب میں کیے جانے والے تہلکہ خیز انکشاف پر اب پاک فوج نے بھی ردعمل دے دیا ہے۔

عسکری ذرائع سے موصول ہونے والی تفصیلات کے مطابق سابق آئی ایس آئی چیف اسد درانی کی کتاب پر پاک فوج نے شدید ردعمل دیا ہے۔ اسد درانی کی جانب سے ان کی کتاب میں کیے جانے والے کئی تہلکہ خیز انکشافات کو حقائق کے منافی قرار دیا گیا ہے۔ جبکہ ان حقائق کے منافی دعوے کرنے پر جنرل ریٹائرڈ اسد درانی پر ملٹری کوڈ آف کنڈکٹ کی خلاف ورزی کا الزام بھی عائد کر دیا گیا ہے۔

(جاری ہے)

ملٹری کوڈ آف کنڈکٹ کی خلاف ورزی کا الزام عائد کرتے ہوئے کرتے ہوئے اسد درانی کو 28 مئی کو جی ایچ کیو طلب کر لیا گیا ہے۔ جی ایچ کیو میں ان سے ان کی حالیہ کتاب میں کیے جانے والے دعووں سے متعلق پوچھ گچھ کی جائے گی۔ جبکہ ممکنہ طور پر ان کیخلاف کاروائی بھی عمل میں آ سکتی ہے۔علاوہ ازیں اسد درانی کی کتاب کے پر ملک بھر شدید غم وغصہ پایا جارہا ہے۔

نہ صرف سیاستدان بلکہ ملٹری حکام بھی اسد درانی کی کتاب پر سیخ پا ہیں۔پاک فوج کے سابق افسران نے بھی اسد درانی کے خلاف سخت ایکشن لینے کا مطالبہ کر ڈالا۔مختلف نجی ٹی وی چینلز پر اپنا رد عمل دیتے ہوئے سابق فوجی افسران کا کہنا تھا کہ اسد درانی کی کتاب ملک کے خلاف بہت بڑی سازش ہے اور اس پراسد درانی سےجواب طلبی ضروری ہو چکی ہے۔اسد درانی کے خلاف سخت ترین ایکشن لیا جانا چاہیے۔

واضح رہے کہ سابق آئی ایس آئی چیف اسد درانی نے بھارتی خفیہ ادارے را کے سابق چیف کیساتھ مشترکہ طور پر لکھی گئی کتاب میں دعوی کیا ہے کہ پاکستان نے معاہدے کے تحت اسامہ بن لادن کو پکڑوایا۔ جبکہ پاکستان جلد کلبھوشن یادیو کو بھی چھوڑ دے گا۔ اس کے علاوہ بھی اس درانی کی جانب سے کئی تہلکہ خیز دعوے کیے گئے ہیں۔