وفاق نے ہرسال کم رقم فراہم کی،وعدے پورے نہیں کیے، وفاق کو رواں سال میں 167 روپے فراہم کرنے ہیں، سید مراد علی شاہ

2008 میں حکومت آئی تو امن و امان بڑا مسئلہ تھا اور2013میں امن وامن کی صورتحال کافی خراب تھی، کراچی میں امن و امان کے بغیر ترقی ممکن نہیں ہے، بلاول بھٹوزرداری سندھ حکومت کی کارکردگی کے حوالے بریفنگ

ہفتہ مئی 22:07

وفاق نے ہرسال کم رقم فراہم کی،وعدے پورے نہیں کیے، وفاق کو رواں سال میں ..
کراچی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 26 مئی2018ء) وزیراعلی سندھ سید مراد علی شاہ نے کہاہے کہ وفاق نے ہرسال کم رقم فراہم کی،وعدے پورے نہیں کیے، وفاق کو رواں سال میں 167 روپے فراہم کرنے ہیں۔ امن وامان کے بغیرترقی ناممکن ہے،،سندھ حکومت نے قیام امن کیلیے بہت کام کیااوراغوابرائے تاوان کی وارداتوں میں نمایاں کمی ہوئی۔ قائداعظم محمد علی جناح،، ذوالفقار علی شاہ بھٹو اور شہید بینظیر بھٹو کے بتائے ہوئے راستے پرگامزن ہیں۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے ہفتہ کو چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری کو وزیراعلی ہائوس میں بریفنگ دیتے ہوئے کیا۔سید مراد علی شاہ نے کہا کہ 2008 میں حکومت آئی تو امن و امان بڑا مسئلہ تھا اور2013میں امن وامن کی صورتحال کافی خراب تھی، کراچی میں امن و امان کے بغیر ترقی ممکن نہیں ہے، ہم نے کراچی میں انٹرنیشنل کرکٹ بحال کرائی اورکراچی کی روشنیاں دوبارہ بحال کرکے کراچی سے خوف اوردہشت گردی کاخاتمہ کردیا اب تو کراچی میں رات کو بھی لوگ گھومتے ہیں، لیکن اسٹریٹ کرائم پرابھی کام کرنا ہے۔

(جاری ہے)

انھوں نے چیئرمین کو بتایا کہ بوہری جماعت کے روحانی پیشوا سیدنا سیف الدین کراچی میں ایک ماہ اپنے مریدین کے ہمراہ گزار گئے ہیں ان کے ساتھ فارینرز نے امن و امان کی تعریف کی۔ سندھ میں امان و امان کی صورتحال بہت بہتر ہے، اپیکس کمیٹی کے سب سے زیادہ اجلاس سندھ میں ہوئے۔ انھوں نے چیئرمین کو بتایا کہ سندھ ریونیو بورڈ کی وصولیوں میں اچھی کاکردگی رہی۔

شعبہ صحت میں انھوں نے اپنی بریفنگ میں بتایا کہ ادوایات کی خریداری 4ارب سیبڑھاکر10ارب کردی ہے، ایس آئی یوٹی،این ائی سی وی ڈی میں پوریملک سیمریض ہوتے ہیں، ایس آئی یو ٹی کیلے 2013 میں صرف 2 ارب روپے رقم مختص تھے لیکن رواں سال ایس آئی یو ٹی کو ساڑھے 5 ارب روپے دیں گے، ہمیں فخر محسوس ہوتا ہے بتاتے ہوئے کہ ایس آئی یو ٹی سندھ میں پچاس فیصد سے زیادہ تعداد سندھ کے باہر کے مریضوں کی ہے۔

مراد علی شاہ نے کہا کہ کراچی ٹھٹہ ڈبل وے پچاس کلومیٹر کا روڈ تعمیر کیا،دریائے سندھ پر وفاقی حکومت پل بناتی ہے لیکن سندھ میں دریائے سندھ پر صوبائی حکومت نے پلیں بنائی، ہوا سے بجلی پیدا کرنے کے 947 میگاواٹ کے منصوبے کا م کررہے ہیں۔ انھوں نے چیئرمین کو بتایا کہ سانگھڑ کو اپنا کہنے والوں نے سڑکوں کا حال خراب کردیا تھا اورہم نے سانگھڑ میں سڑکیں تعمیر کی ہیں۔