کوئی بھی ملک موجودہ دور کے چیلنجز سے تنہا نہیں نمٹ سکتا ہے، چین

ْ عالمی چیلنجز سے نمٹنے اور پائیدار عالمگیر ترقی کی بنیاد کو مضبوط کرنے کے لیے اعتماد سازی کے قیام اور تعاون کو فروغ دیں، چین کے نائب صدر وانگ چھی شان کا سینٹ پیٹرز برگ عالمی اقتصادی فورم کے کل رکنی اجلاس سے خطاب

ہفتہ مئی 22:28

ْ ماسکو (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 26 مئی2018ء) چین نے پائیدار عالمی ترقی کے لیے اعتماد سازی اور تعاون کے فروغ پر زور دیتے ہوئے کہا ہے کہ عالمی چیلنجز سے نمٹنے اور پائیدار عالمگیر ترقی کی بنیاد کو مضبوط کرنے کے لیے اعتماد سازی کے قیام اور تعاون کو فروغ دیں، کوئی بھی ملک موجودہ دور کے چیلنجز سے تنہا نہیں نمٹ سکتا ہے۔ چائنہ ریڈیو انٹرنیشنل کے مطابق چین کے نائب صدر وانگ چھی شان نے روس میں بائیسویں سینٹ پیٹرز برگ عالمی اقتصادی فورم کے کل رکنی اجلاس سے خطاب کیا جس میں انہوں نے دنیا پر زور دیا کہ عالمی چیلنجز سے نمٹنے اور پائیدار عالمگیر ترقی کی بنیاد کو مضبوط کرنے کے لیے اعتماد سازی کے قیام اور تعاون کو فروغ دیں۔

رواں برس مذکورہ فورم کا موضوع ہے "اعتماد پر مبنی معیشت کی تشکیل"۔

(جاری ہے)

وانگ نے کہا کہ کوئی بھی ملک موجودہ دور کے چیلنجز سے تنہا نہیں نمٹ سکتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ باہمی اعتماد ، برابری ، باہمی مفاد اور اشتراکیت کی حامل اعتماد پر مبنی ایسی معیشت تشکیل دی جائے جس میں کاروباری اداروں ، منڈیوں اور ممالک کے درمیان نیک نیتی کے جذبات موجود ہوں تا کہ عالمگیر ترقی کے امکانات سے مستفید ہوا جا سکے۔

چینی نائب صدر کا مزید کہنا تھا کہ اعتماد سازی کے قیام کے لیے باہمی ہم آہنگی اور باہمی احترام لازم ہیں۔ انہوں نے کہا کہ معیشت اور تجارت کو سیاسی رنگ دینا اور معمولی خلاف ورزیوں پر بھی اقتصادی پابندیوں کی چھڑی اٹھانا منڈی کی یقینی کی صورتحال کو شدید کمزور کر دے گا۔ انہوں نے کہا کہ کسی بھی ملک کو اپنے مسائل کا ذمہ دار دوسرے ملک کو نہیں ٹھرانا چاہیے ، تمام ممالک کو اپنی ضروریات کے مطابق ترقیاتی راہوں کا انتخاب کرناچاہیے اور کھلے پن اور تعاون کے تحت مشترکہ ترقی کی جستجو کرنی چاہیے۔ وانگ نے مزید کہا کہ اقتصادی و تجارتی تنازعات کو بات چیت اور مشاورت سے مناسب انداز سے حل کیا جائے اور متعلقہ فریقین کو ایک دوسرے کے خدشات کا خیال رکھنا چاہیے۔

متعلقہ عنوان :