جے یو آئی ایف کے کارکنان کا فاٹا بل کے خلاف خیبرپختونخوا اسمبلی کے باہر دھرنا

جےیوآئی(ف) کے کارکن خیبر پختونخوا اسمبلی کی عمارت پر چڑھ گئے

Muqadas Farooq مقدس فاروق اعوان اتوار مئی 12:08

جے یو آئی ایف کے کارکنان کا فاٹا بل کے خلاف خیبرپختونخوا اسمبلی کے باہر ..
پشاور(اردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔27 مئی 2018ء) جے یو آئی ایف نے فاٹا بل کے خلاف خیبرپختونخوا اسمبلی کے باہر دھرنا دے دیا۔اس حوالے سے جے یو آئی ایف سینکڑوں کارکن خیبر روڈ پر موجود ہیں۔اور ان کارکنان نے خیبر روڈ بند کر کے اس کا مکمل گھیراؤ کر لیا ہے۔اس دوران جمعیت علمائے اسلام کےکارکن اور پولیس کےدرمیان جھڑپ ہو گئی۔جےیوآئی(ف)کےکارکن خیبر پختونخوا اسمبلی کی عمارت پر چڑھ گئے۔

جےیوآئی(ف)کےکارکنوں نے خیبر پختونخوا اسمبلی میں گھسنے کی بھی کوشش کی ہے۔تاہم پولیس نے جےیوآئی(ف)کے کارکنوں کو اسمبلی گیٹ پر روک دیا ہے۔یاد رہے کہ قومی اسمبلی کے بعد سینٹ نے بھی فاٹا کے خیبرپختونخوا میں انضمام کی اکتسیویں آئینی ترمیم منظور کرلی گئی تھی،جس کے بعد ان فاٹا کے عوام بھی اپنے نمائندے منتخب کر سکیں گے۔

(جاری ہے)

میڈیا رپورٹس کے مطابق فاٹا انضمام بل کی حمایت میں 71ووٹ جب کہ مخالفت میں 5ووٹ آئے۔

عثمان کاکٹر سینیٹر اعظم موسی خیل گل بشرہ عابدہ عظیم سردار محمد شفیق ترین نے مخالفت میں ووٹ دیا۔اس موقع پر چیئرمین سینٹ نے کہا کہ آج فاٹا کے عوام اور وفاق پاکستان کے لئے خوشی کا دن ہے۔تاہم جمیعت علمائے اسلام ف نے فاٹا انضمام کے خلاف بڑا قدم اٹھانے کا فیصلہ کیا تھا اور جمیعت علمائے اسلام ف نے فاٹا انضمام کےخلاف 27مئی کوکےپی اسمبلی کےسامنےاحتجاج کااعلان کیا تھا اور کارکنان کو اس حوالے سے ضروری ہدایات بھی جاری کر دی گئیں تھیں۔

فاٹا انضمام  بل کے حوالے سے حکومت اور اپوزیشن ایک ہی موقف پر نظر آئیں تاہم جمیعت علمائے اسلام ف نے پہلے دن سے ہی فاٹا انضمام کی مخالفت کی تھی اور اس معاملے میں محمود اچکزئی بھی جمیعت علمائے اسلام ف کے ہم نوا تھے لیکن اس کے باوجود فاٹا کا انضمام عمل میں آیا۔