ایسوسی ایشن آف چارٹرڈ سرٹیفائیڈ اکائونٹنٹس نے ’’ابھرتے ہوئے پاکستان میں ترقی کے لئے مواقع‘‘ کے موضوع پر مباحثہ کا انعقاد اور سیمنز ڈیلی گیشن کی میزبانی کی

پیر مئی 17:15

ایسوسی ایشن آف چارٹرڈ سرٹیفائیڈ اکائونٹنٹس نے ’’ابھرتے ہوئے پاکستان ..
اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 28 مئی2018ء) ایسوسی ایشن آف چارٹرڈ سرٹیفائیڈ اکائونٹنٹس (اے سی سی ای) نے ’’ابھرتے ہوئے پاکستان میں ترقی کے لئے مواقع‘‘ کے موضوع پر مباحثہ کا انعقاد اور سیمنز ڈیلی گیشن کی میزبانی کی۔ ابھرتے ہوئے پاکستان کا ایجنڈا وزارت تجارت نے تیار کیا ہے جس میں قومی تعمیر کی وسیع تر سرگرمیاں شامل ہیں اور اس سلسلے میں دیئے جانے والے عشائیہ میں پاکستان کے مستقبل کو نئی شکل دینے کے لئے تبدیلیوں کا احاطہ کیا گیا ہے۔

اس کارپوریٹ ڈنر میں مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والے افراد، فعال ترجیحات کی حامل اور کاروباری شخصیات، پالیسی سازوں، تاجروں اور نوجوان اے سی سی اے ممبران نے اپنے خیالات پیش کئے ، اسلا آباد سے تعلق رکھنے والے ممتاز کاروباری افراد کو پاکستان میں موجودہ کاروباری خدشات کے ازالہ کے لئے اپنے نظریات اور موثر کاروباری ترجیحات پیش کرنے کا موقع فراہم کیا۔

(جاری ہے)

مہمان خصوصی وزیر مملکت اور چیئرمین سرمایہ کاری بورڈ نعیم زمیندار نے کہا کہ چین پاکستان اقتصادی راہداری منصوبہ پاکستان کی نوجوان آبادی کے لئے بڑے مواقع پیش کرتا ہے اور ادارے انہیں روزگار فراہم کر رہے ہیں۔ ملک کو ان اہم پیشرفتوں سے فائدہ حاصل کرنے کے لئے تذویراتی سوچ کے حامل پروفیشنل اکائونٹنٹس کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ ٹیکنالوجی کے کردار کے حوالے سے جب ہم بات کرتے ہیں تو دوسرا اہم رجحان پاکستان پر اثر انداز ہو رہا ہوتا ہے۔

یہ ایک اہم مسئلہ ہے جو ہر شعبے کے کاروباروں میں مختصر، درمیانی اور طویل المدت تذویراتی مباحثوں پر غالب ہے۔ اس قسم کے اقدامات کے مستقبل میں مالیاتی امور پر بھی مثبت اثرات مرتب ہوں گے کیونکہ تیزی کے ساتھ بڑھتے ہوئے اعداد و شمار پر مبنی کاروباری ماحول کی وجہ سے ہمیں یہ بات سمجھنے کی ضرورت ہے کہ ہم کارپوریشنز کے لئے کس طرح کا ماحول فراہم کر سکتے ہیں۔

سیمینز کی جانب سے شریک ہونے والے نمائندوں میں ایگزیکٹو وی پی گلوبل سلوشنز فار دی ڈریسر رینڈ بزنس ڈینیل ٹی سمپسن، سی ایف او سیمنز پاکستان عمر جلیل انور شامل تھے۔ ڈینیل ٹی سمپسن نے اس موقع پر کہا کہ یہ پاکستان میں ہونے والی ترقی اور اس کا مشاہدہ کرنے کے لئے بہترین وقت ہے جو اس نے گزشتہ کئی دہائیوں میں حاصل کی ہے۔ سیمنز ملک کی اقتصادی ترقی میں کردار ادا کرنے کی جانب دیکھ رہا ہے۔ اے سی سی اے پاکستان کے سربراہ سجید اسلم سمیت اے سی سی اے کی جانب سے نمائندوں نے مباحثوں میں اس بات کو دوہرایا کہ اے سی سی اے کے ارکان جی ڈی پی کی اوسط 7 فیصد نمو اور پاکستان کی درجہ بندی کو عالمی مسابقتی انڈیکس اور کاروباری آسانیوں کیلئے پچاس سرفہرست ممالک میں لانے کے لئے پرعزم ہیں۔