یو م تکبیر پاکستان اور بلوچستان دونوں کے حوالے سے اہم ہے،میر عبدالقدوس بزنجو

دفاع کو مضبوط بنا نے کے لئے بہت سی مشکلات اور ،تکلیفیں برداشت کیں،دشمن پا کستان کو بلوچستان کے ذریعے کمزور کرنا چاہتا ہے، بلوچستان پا کستان کا مضبو ط ستون بنے گا ،بلوچستان کی تاریخ میں پہلی مرتبہ میں سب سے زیادہ25فیصد بجٹ تعلیم کو دیا گیا ہے ،صوبے میں اپنی مدد آپ کے تحت کینسر ہسپتال بنائیں گے،وزیراعلی بلوچستان

پیر مئی 20:24

یو م تکبیر پاکستان اور بلوچستان دونوں کے حوالے سے اہم ہے،میر عبدالقدوس ..
کوئٹہ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 28 مئی2018ء) وزیراعلیٰ بلوچستان میر عبدالقدوس بزنجو نے کہا ہے کہ دشمن پا کستان کو بلوچستان کے ذریعے کمزور کرنا چاہتا ہے مگر بلوچستان پا کستان کا مضبو ط ستون بنے گا ،،بلوچستان کی تاریخ میں پہلی مرتبہ میں سب سے زیادہ25فیصد بجٹ تعلیم کو دیا گیا ہے ،صوبے میں اپنی مدد آپ کے تحت کینسر ہسپتال بنائیں گے قوم پرستی کے نام پر ووٹ لینے والوںکو سب نے دیکھ لیا ہے ،آئندہ عام انتخابات میں عوام ترقی پسند نمائندوں کو منتخب کریں ،انہوں نے یہ بات پیر کو بیوٹمز میں یوم تکبیر کے حوالے سے منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہی ،اس موقع پر صوبائی وزیرمواصلات و تعمیرات میر عاصم کردگیلو،،بلوچستان عوامی پارٹی کے مرکزی صدر میر جام کمال ،وزیراعلی کے معاون خصوصی بلال کاکڑ،وائس چانسلر بیو ٹمز احمد فاروق بازئی ،کمشنر کوئٹہ ڈویژن جاوید انور شاہوانی سمیت دیگر بھی مو جود تھے ،،وزیر اعلیٰ میر عبدالقدوس بزنجو نے کہا کہ یو م تکبیر پاکستان اور بلوچستان دونوں کے حوالے سے اہم ہے ہم نے اپنے دفاع کو مضبوط بنا نے کے لئے بہت سی مشکلات اور ،تکلیفیں برداشت کیں،انہوں نے کہا کہ ہمارے دشمن ہمیں کمزور کرنے کی کوشش کرتے ہیں کہ کسی طرح بلوچستان کو کمزور کریںاس وقت پورے دنیا کی نظریں بلوچستان پر ہیں کہ کسی نہ کسی طرح سے بلوچستان کو پاکستان سے جدا کریں لیکن بلوچستان پاکستان کیساتھ رہے گااور بلوچستان پاکستان کو مضبوط کرے گا،انہوں نے کہا کہ ہم ملک اور اداروں کو مضبوط کرنا ہے،دشمن ہر قسم کی ہربے استعمال کرکے بھائی کو بھائی سے لڑانا چاہتا ہے ہمیںملک میں ہر طرح کی دہشتگردی کا خاتمہ کرنا ہے اور بھائی چارگی کی فضاء قائم کرنی ہے ،انہوں نے کہا کہ پا کستان ہمارا ملک ہے اور بلوچستان ہمارا صوبہ ہے ہم مسلمان اورپاکستانی ہیں ،،بلوچستان میں رہنے والی تمام اقوام ایک ہیں ، اور ہمارا اپنے وسائل پر مکمل حق ہے ،انہوں نے کہا کہ قوم پرستی کے نام پر تفریق کی باتیں اب ختم ہونی چاہییں،ہم نے ملکر اس ملک اور صوبے کو ترقی دینی ہے ،ترقی اس وقت آئے جب ہم ایک دوسرے کا احترام کریں گے اور اپنی ذمہ داریوں کو پورا کریں گے،انہوں نے کہا کہ طلبا ء اپنی پڑھائی پر توجہ دیں حکومت اپنی ذمہ داری پوری کرے گی ،اب ہمیں یہ نہیں کہنا چاہیے کہ میں پشتون ہوں یا بلوچ ہوں ہمیں جو ذمہ داری دی گئی اسے ادارکریں ،انہوں نے کہا کہ اب جب حکومت ختم ہو نے جارہی ہے تو لوگوں کو مختلف نعروں کے ذریعے اپنی جانب راغب کیا جارہا ہے میں ان سیاسی جماعتوں سے کہتا ہوں کہ ،جب آپ کام کرو گے تو لوگ آپ کے ہوں گے ،انہوں نے کہا کہ ہم نے بلو چستان کی تاریخ میں پہلی مرتبہ ،25فیصد بجٹ تعلیم کو دیا ہے ہمیں تعلیم پر توجہ مرکوز کر نے کی ضرورت ہے انہوں نے کہا کہ وزیراعلیٰ پروگرام کے تحت سو اسکولوں کوبہتر انفراسٹریکچر اور بہتراستاتذہ دیں گے چیزوں کو بہتر کرسکیںصوبے میں 17اسکول ایسے ہیں جس کے ابھی تک بلڈنگ ہی نہیں ہے ،اور ایسے 3سو اسکول ہیں جس میں بلڈنگ تو ہے لیکن وہ بیٹھنے کے قابل نہیں،جس کی وجہ سے بچے دھوپ میں پڑھتے ہیں ،بہت افسوس سے کہنا پڑتا ہے کہ ہم نے تعلیم کی بہتری کے وعدے تو بہت کئے لیکن پورے نہیں کئے ،ہماری حکومت کی ذمہ داری ہے کہ اسکولوںکو بہتر بنائیں ،انہوں نے کہا کہ ایسے بچے ہے جو پڑھنا بھی چاہتے اور قابل بھی ہیں لیکن تعلمی اخراجات ادا نہیں کر سکتے انکی فیس حکومت بلوچستان برداشت کریگی ،انہوں نے کہا کہ ہم بڑے بڑے وعدے نہیں کرتے لیکن صوبے میں بنیادی انفراسٹرکچر کو بہتر بنا نے کے لئے اقدامار کریں گے ،صوبے میں کینسر ہسپتال بنائیں گے ہم نے چیف منسٹر ہیلتھ کارڈ پروگرام بھی شروع کیا ہے اورہم ایسے پروگرام شروع کررہے ہیں کہ مستقبل میں جو بھی حکومت آئے تو وہ اس سے مستفید ہوسکے ،انہوں نے کہا کہ عوام آئندہ عام انتخابات میں جذباتی اور قومیت کی بجائی صوبے کے مفاد میں ووٹ دیکر فیصلہ کرے اگر عوام نے صحیح فیصلہ کیا تو اچھے نمائندے آئیںگے اور صوبے کے مستقبل کا فیصلہ اچھی جماعتیں کرسکیں گی ،قوم پرستی کے نام پر ووٹ لینے والوںکو سب نے دیکھ لیا ہے اب فیصلہ عوام کے ہاتھوں میں ہے اور امید ہے کہ وہ بہتر نمائندوں کو منتخب کریں گے جو انکے مسائل کو حل کرسکیں