بھارت اگر سنجیدہ ہے تو جموںوکشمیر کو ایک متنازعہ علاقہ تسلیم کرے‘سیدعلی گیلانی

حریت قیادت مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے مذاکراتی عمل کے خلاف نہیں‘ماضی میں بات چیت کے 150دور ہوچکے ہیں مگریہ ایک فضول مشق ثابت ہوئی مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے مذاکراتی عمل میں بنیادی حقائق کا اعتراف کئے بغیر شامل ہونا ماضی کی طرح ایک فضول مشق ثابت ہوگی‘کانفرس سے خطاب

پیر مئی 21:37

سرینگر(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 28 مئی2018ء) مقبوضہ کشمیرمیںکل جماعتی حریت کانفرنس کے چیئرمین سیدعلی گیلانی نے واضح کیاہے کہ حریت قیادت مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے مذاکراتی عمل کے خلاف نہیں ہے اور اگر واقعی بھارت مسئلہ کشمیر کو مذاکرات کے ذریعے حل کرنے میں سنجیدہ ہے تو اسے پہلے جموںوکشمیر کوایک متنازعہ علاقہ قرار دینا چاہیے۔کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق سیدعلی گیلانی نے سرینگر میں منعقدہ ایک شان نزول کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے مذاکراتی عمل میں بنیادی حقائق کا اعتراف کئے بغیر شامل ہونا ماضی کی طرح ایک فضول مشق ثابت ہوگی۔

سیدعلی گیلانی نے بھارتی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ کے حالیہ بیان کہ بھارت مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے پاکستان اور حریت قیادت کے ساتھ بات چیت کیلئے تیار ہے کا حوالہ دیتے ہوئے کہاکہ ہم مذاکرات کے خلاف نہیں ہیں تاہم زمینی حقائق کو تسلیم کئے بغیر بات چیت کا کوئی فائدہ نہیں ۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ2010 کے عوامی انتفادہ کے دوران حریت قیادت نے بھارت کوجموںو کشمیر کو متنازعہ قرار دینے،وہاں سے فوجی انخلاء ،تمام سیاسی نظربندوں کی رہائی اور کالے قوانین کو کالعدم قرار دینے کی تجویز دی تھی ۔

انہوں نے کہا کہ اب تک ماضی میں مذاکرات کے 150سے زائد دور ہو چکے ہیں مگر کوئی نتیجہ برآمد نہیں ہوا ہے ۔ حریت چیئرمین نے حق خودارادیت کی جائز اور مبنی برحق تحریک کی کامیابی کیلئے اپنی صفوں میں اتحاد و اتفاق برقراررکھنے کی اپیل کرتے ہوئے نوجوانوں سے اپیل کی کہ وہ پوری ہوشمندی اور بالغ نظری کے ساتھ تحریک آزادی کو آگے بڑھانے کا فریضہ انجام دیں۔

انہوں نے نہتے کشمیریوںپر بھارتی فورسز کی طرف سے وحشیانہ ظلم وبربریت کو ایک سانحہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ بھارت کو کوئی حق نہیں پہنچتا کہ وہ کشمیریوں کی حق پر مبنی جدوجہد آزادی کو کمزو ر کرنے کیلئے طاقت کا وحشیانہ استعمال کرے ۔ جموںوکشمیر لبریشن فرنٹ کے چیئرمین محمد یاسین ملک نے اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے کہاکہ بھارت حریت قیادت اور نہتے کشمیری عوام کو اپنی جدوجہد آزادی جاری رکھنے سے روکنے کیلئے انہیں بدترین ظلم و تشدد کا نشانہ بنارہا ہے ۔

انہوں نے کہا کہ اس وقت مقبوضہ علاقے کی صورتحال انتہائی ابتر ہے اور شہداء کے اہلخانہ سے تعزیت اور انکے جنازوںمیں شمولیت کی بھی اجاات نہیں ہے۔انہوںنے کشمیری حریت رہنمائوں اور کارکنوں کی مسلسل غیر قانونی نظربندی کی بھی شدید مذمت کی ۔ کانفرنس سے تحریک حریت کے رہنماء محمد اشرف صحرائی اور دیگر حریت رہنمائوںغلام نبی سمجھی، مولانا الطاف حسین ندوی، ایڈوکیٹ زاہد علی، حکیم عبدالرشید، مولوی بشیر احمد عرفانی اور دیگر نے بھی خطاب کیا جبکہ حریت ترجمان غلام احمد گلزار نے نظامت کے فرائض انجام دیے ۔