فاٹا کا انضمام ،متحدہ مجلس عمل میں پھوٹ پڑ گئی

جے یو آئی (ف) اور جماعت اسلامی کے موقف میں اختلافات کے باعث قبائلی علاقوں میں مشترکہ انتخابی مہم چلانے میں مشکلات کا سامنا فاٹا اختلافات سے متحدہ مجلس عمل الائنس کے اتحاد کو کوئی فرق نہیں پڑے گا، دونوں جماعتوں کا موقف

پیر مئی 22:11

اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 28 مئی2018ء) فاٹا کے خیبرپختونخوا میں انضمام کے معاملے پر متحدہ مجلس عمل کی دو بڑی جماعتوں جمعیت علما اسلام (ف) اور جماعت اسلامی کے درمیان اختلافات کھل کر سامنے آگئے ہیں ، دونوں بڑی سیاسی جماعتیں فاٹا انضمام کی حمایت اور مخالفت کرنے والوں کی ہمدردیاں اور ووٹ لینے کی منصوبہ بندی کر رہیں جبکہ دوسری جانب قبائلی علاقوںمیں مشترکہ انتخابی مہم چلانے سے دونوں سیاسی جماعتوں کے مقامی رہنمائوںنے انکار کر دیا ہے ۔

ایم ایم اے کے ذرائع کے مطابق سینیٹ اور قومی اسمبلی سے منظور ہونے والے فاٹا انضمام بل پر ایم ایم کی دو بڑی سیاسی جماعتوں کے مابین اختلافات نے دینی جماعتوں کے اتحاد کو دائو پر لگا دیا ہے ذرائع کے مطابق آنے والے عام انتخابات کے موقع پر جماعت اسلامی فاٹا کو خیبر پختونخوا میں ضم ہونے کو اپنی تاریخی کامیابی قرار دیکر قبائلیوں کی ہمدردیاں اور ووٹ حاصل کرنے کی خواہشمند ہے جبکہ دوسری جانب جمعیت علماء اسلام فاٹا انضمام کے مخالفین مشران کو اپنے ساتھ ملا کر انتخابی مہم چلانا چاہتی ہے ذرائع کے مطابق موجودہ صورتحال دونوں بڑی سیاسی جماعتوں کیلئے پریشان کن ہے اور مقامی سطح پر دونوں جماعتوں کے مشران نے بھی مشترکہ انتخابی مہم چلانے پر اپنے شدید تحفظات کا اظہار کیا ہے ذرائع کے مطابق ایم ایم اے کے اتحاد کے باوجود جے یو آئی (ف) کے کارکنان نے خیبرپختونخوا اسمبلی کے باہر احتجاج کیا جبکہ جماعت اسلامی کے ارکان اس بل کی حمایت میں ووٹ ڈالنے کے لیے صوبائی اسمبلی میں موجود رہے۔

(جاری ہے)

ذرائع کے مطابق دونوں جماعتوں کے رہنمااس معاملے کو نظر انداز کرنے کی کوشش کر رہے ہیں اور یہ دعویٰ کر رہے ہیں کہ فاٹا انضمام پر اختلافات سے ان کے انتخابی اتحاد پر کوئی اثر نہیں پڑے گا۔اس سلسلے میں جماعت اسلامی کے رہنمائوں نے بتایا کہ فاٹا کے خیبرپختونخوا سے انضمام سمیت مختلف معاملات پر دونوں جماعتوں کا نقطہ نظر مختلف ہے، تاہم ان کا دعویٰ ہے کہ مارچ میں ایم ایم اے کے دوبارہ بحال ہونے سے پہلے سربراہوں نے فیصلہ کیا تھا کہ اتحاد کو نقصان پہنچائے بغیر تمام جماعتیں اپنی نظریاتی پوزیشن برقرار رکھیں گی۔

جماعت اسلامی کے مطابق اگرچہ ایم ایم اے کی 2 اہم جماعتوں کے درمیان فاٹا انضمام کے معاملے پر اختلاف تھا لیکن اب دونوں جماعتوں کا اس معاملے پر ’ایک نقطہ نظر‘ پر ہوں گے اور فاٹا انضمام کے معاملے پر اختلاف کرنے والے دونوں جماعتیں ایم ایم اے کی سپریم کونسل کا فیصلہ قبول کریں گی دوسری جانب جے یو آئی (ف) کے ذرائع نے دعویٰ کیا ہے کہ آئندہ عام انتخابات کے بعد ایم ایم اے حقیقی صورت میں فعال ہوجائے گی۔

جماعت اسلامی کے ساتھ اختلافات کے معاملے پر ان کا کہنا تھا کہ ’ہمارا اتحاد انتخابات کے لیے ہے اور ہم ان معاملات پر بات کریں گے جو الیکشن کے بعد پیش آئیں گے‘ جے یو آئی کے مطابق فاٹا انضمام کے معاملے پر جے یو آئی (ف) اور جماعت اسلامی کے درمیان اختلافات ہیں لیکن یہ الائنس کے اتحاد کو نقصان نہیں پہنچائے گا جے یو آئی کے مطابق وہ فاٹا کو قومی دھارے میں شامل کرنے کے خیال کے مخالف نہیں لیکن وہ صرف یہ چاہتے ہیں کہ قبائلی عوام کے مستقبل کے فیصلے میں انہیں بھی شامل کیا جانا چاہیے تھا۔اعجاز خان