مرید عباس عارف کی تحقیقی کتاب ’’سرائیکی مرثیے وچ نثر‘‘ شائع ہو گئی

منگل مئی 11:20

اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 29 مئی2018ء) نوجوان محقق و شاعر مرید عباس عارف کی 280صفحات کی تحقیقی کتاب ’’سرائیکی مرثیے وچ نثر‘‘معروف ناشر جھوک پبلشرز کے زیر اہتمام عمدہ تزئین و طباعت کے ساتھ شائع ہو گئی ہے۔ اسلم رسولپوری نے اپنے تبصرے میں لکھا ہے ’’ مرید عباس عارف کا یہ انتخاب ادبی، فنی اور دیگر تمام حوالوں سے معتبر اور مستند ہے‘‘جبکہ لیہ کے ڈاکٹر گل عباس اعوان کی رائے ہے کہ یہ کتاب سرائیکی نثر میں ایک قابلِ ذکر اضافہ ہے۔

(جاری ہے)

محقق نے ذاکرین اور ان کی بیان کردہ واقعہ نگاری اور منظر نگاری کو انتخاب کلام کے ساتھ خوب نبھایا ہے جبکہ اس کتاب میں اہلِ بیت کے خطبے بھی موجود ہیں۔مرید عباس عارف کی یہ کتاب مرثیے کے نثری ادب میں چراغِ راہ کی حیثیت رکھتی ہے۔ مصنف کا اندازِ بیان نیم کلاسیکی تذکرہ نویسی کا سا ہے تاہم مرثیے کے محققین کے لیے یہ ایک مفید کتاب ہے۔ کتاب کی قیمت620/- روپے ہے اور انتساب جام اللہ بخش چاچڑ کے نام ہے۔ کتاب میں اسلم رسول پوری اور ڈاکٹر گل عباس اعوان کے مضامین شامل ہیں۔

متعلقہ عنوان :