صدر مملکت ممنون حسین نے فاٹا سے متعلق عبوری انتظامی آرڈر پر دستخط کردیے

قبائلی علاقوں کا انتظام عبوری مدت کے دوران انتظامی آرڈر کے تحت چلایا جائے گا۔فاٹا عبوری گورننس ریگولیشن

Mian Nadeem میاں محمد ندیم منگل مئی 11:51

صدر مملکت ممنون حسین نے فاٹا سے متعلق عبوری انتظامی آرڈر پر دستخط کردیے
اسلام آباد(اردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین-انٹرنیشنل پریس ایجنسی۔29 مئی۔2018ء) صدر مملکت ممنون حسین نے فاٹا سے متعلق عبوری انتظامی آرڈر پر دستخط کردیے ہیں، خیبرپختونخوا سے متصل قبائلی علاقوں کا انتظام عبوری مدت کے دوران انتظامی آرڈر کے تحت چلایا جائے گا۔۔فاٹا عبوری گورننس ریگولیشن 2018 ان قوانین کا مجموعہ ہے جن کے تحت خیبر پختونخوا میں انضمام مکمل ہونے تک فاٹا کا انتظام چلایا جائے گا۔

اس انتظامی آرڈر پرتمام اپوزیشن جماعتوں نے اتفاق کیا تھا اور اس کے نفاذ سے برسوں پرانے کالے قانون فرنٹیئر کرائمز ریگولیشن ((ایف سی آر) سے فاٹا کے عوام کو رہائی مل گئی۔خیال رہے کہ 24 مئی کو قومی اسمبلی میں فاٹا کے خیبر پختونخوا سے انضمام کا 31 ویں آئینی ترمیمی بل منظور کیا گیا تھا اور اگلے ہی روز سینیٹ نے بھی اس کی منظوری دے دی تھی۔

(جاری ہے)

27 مئی کو یہ بل توثیق کے لیے خیبر پختونخوا کی اسمبلی میں پیش کیا گیا تھا اور اسے دوتہائی اکثریت سے منظور کرلیا گیا تھا۔

خیبر پختونخوا اسمبلی نے فاٹا کے خیبر پختونخوا میں انضمام سے متعلق وفاقی بل کی توثیق کی‘بل دو تہائی اکثریت سے منظور ہوا جس میں 92 اراکین اسمبلی نے اس کے حق میں جبکہ سات نے اس کے خلاف ووٹ ڈالا۔یہ امر بھی اہم ہے کہ یہ خیبر پختونخوا اسمبلی کا اختتامی اور غیر معمولی اجلاس تھا کیونکہ اس اجلاس کے روز ہی کے پی کے پی اسمبلی نے اپنی پانچ سالہ آئینی مدت بھی پوری کر لی ۔

اس سے قبل قبائلی علاقوں کے خیبر پختونخوا میں انضمام کے خلاف پشاور میں مذہبی جماعت کے کارکنوں اور قبائلی راہنماﺅں نے احتجاجی دھرنا دیا اور مظاہرین نے خیبر پختونخوا اسمبلی کا گھیراﺅ کیا تھا۔ صدر مملکت کے دستخط سے فاٹا خیبر پختونخوا میں ضم ہوجائے گا اور آئین کے آرٹیکل 247 کا خاتمہ ہوجائے گا جس کے تحت وفاق کو فاٹا اور پاٹا تک ایگزیکٹو اتھارٹی حاصل ہے۔