نائٹروجن کھاد پودے کی بڑھوتری اورنشو ونما میں معاونت فراہم کرتی ہے ،ماہرین زراعت

منگل مئی 12:51

فیصل آباد۔29 مئی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 29 مئی2018ء)نائٹروجنی کھاد ترشاوہ پودوں کے باغات کیلئے سب سے زیادہ اہمیت کی حامل ہے لہٰذاکلوروفل بنانے میں معاونت اور پودے کی بڑھوتری سمیت پھل کی بہتر نشو ونما کیلئے باغبان نائٹروجنی کھاد کی کمی نہ آنے دیں ۔ماہرین زراعت نے کہاہے کہ ترشاوہ پھلوں کے باغبانوں کو چاہیے کہ وہ پھل کی اچھی پیداوار کے حصول کیلئے باغات میں کھادوں کے مناسب اور متناسب استعمال کو یقینی بنائیں ۔

انہوں نے بتایاکہ ترشاوہ پھلوں کی اچھی پیداوار کیلئے کھادوں کا استعمال بنیادی اہمیت کا حامل ہے۔ انہوں نے کہا کہ غذائی عناصر کی کمی بیشی ترشاوہ پھلوں کی صحت ، نشو ونما ،پیداوار اور معیار پر برے اثرات مرتب کرتی ہے۔انہوںنے بتایا کہ پودے کو جن غذائی اجزاء کی ضرورت ہوتی ہے ان میںنائٹروجن سب سے زیادہ اہمیت کی حامل ہے۔

(جاری ہے)

انہوںنے کہا کہ نائٹروجن کھاد پودے کی بڑھوتری اور اس کی نشو ونما میں بھر پور معاونت فراہم کرتی ہے علاوہ ازیں نائٹروجنی کھاد کا استعمال ترشاوہ پھلوں کے پودوں میں کلوروفل بنانے میں بھی معاونت کرتا ہے۔

انہوںنے کہا کہ پھول اور پھل کے بننے ، پھل کی بڑھوتری اور اس کے معیار کیلئے نائٹروجنی کھاد کا بروقت استعمال ضروری ہے۔انہوںنے کہا کہ اگر باغبان کھادوں کا مناسب استعمال کرنے سے غفلت برتیں گے تو انہیں کئی مسائل کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔ انہوںنے کہا کہ اس ضمن میں باغبان حضرات ماہرین زراعت یا محکمہ زراعت کے فیلڈ سٹاف سے بھی رہنمائی حاصل کر سکتے ہیں۔