پی ٹی آئی اب آزاد کشمیر میں بھی ایک بڑی طاقت بن کر ابھر رہی ہے ،ْبیر سٹر سلطان محمود چوہدری

مسلم لیگ (ن) کی حکومت ختم ہونے میں اب صرف چوبیس گھنٹے رہ گئے ہیں ،مسلم لیگ( )ن کے اقتدار کا سورج ہمیشہ ہمیشہ کے لئے غروب ہو جائیگا ،ْصدر پی ٹی آئی آزاد کشمیر

منگل مئی 16:37

چڑہوئی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 29 مئی2018ء) آزاد کشمیر کے سابق وزیر اعظم و پی ٹی آئی کشمیر کے صدر بیرسٹر سلطان محمود چوہدری نے کہا ہے کہ مسلم لیگ (ن) کی پاکستان میں حکومت ختم ہونے میں اب صرف چوبیس گھنٹے رہ گئے ہیں اور اسکے بعد مسلم لیگ ن کے اقتدار کا سورج ہمیشہ ہمیشہ کے لئے غروب ہو جائے گا اور اسکے بعد پاکستان میں عبوری حکومت آجائے گی اور دو مہنیے بعد عمران خان کا سورج طلوع ہو گا جسکی روشنی نہ صرف پاکستان کے چاروں صوبوں بلکہ آزاد کشمیر میں بھی پھیل جائے گی۔

اسی طرح آزاد کشمیر میں (ن) لیگ کی حکومت کی بیساکھیاں تو ختم ہو جائیں گی لیکن پیپلز پارٹی بھی اب قصہء پارینہ بن چکی ہے۔اگرچہ آصف زردار اپنی ساکھ بچانے کے لئے پی ٹی آئی سے اتحاد کی بات کرتے ہیں لیکن عمران خان نے واضح طور پر کہہ دیا ہے کہ کسی صورت پیپلز پارٹی سے اتحاد نہیں ہو گا۔

(جاری ہے)

اب پیپلزل پارٹی کا کوئی مستقبل نہیں۔ پی ٹی آئی اب آزاد کشمیر میں بھی ایک بڑی طاقت بن کر ابھر رہی ہے۔

آج چڑہوئی میں اس افطار ڈنر میں اتنے بڑی تعداد میں عوام کی شرکت نے ثابت کر دیا ہے کہ چڑہوئی آج بھی میرا سیاسی قلعہ ہے اورآج ایسے لگ رہا ہے کہ پورا چڑہوئی پی ٹی آئی میں شامل ہو گیا ہے۔ان خیالات کا اظہار انھوں گزشتہ روز (منگل)کو چڑہوئی میں پی ٹی آئی کشمیر کے امیدوار اسمبلی چوہدری شوکت فرید کی طرف سے اپنے اعزاز میں دئیے گئے افطار ڈنر کے موقع پر ایک بہت بڑے جلسہ سے بطور مہمان خصوصی خطاب کرتے ہوئے کیا۔

افطاڑ ڈنر کے جلسہ کی صدارت چوہدری منیر نے کی جبکہ جلسہ سے چوہدری شوکت فرید، چوہدری اکرم چٹھہ ایڈووکیٹ، چوہدری نصیر ایڈووکیٹ، چوہدری ساجد جونا ایڈووکیٹ،حاجی شاہد، گلریز انصاری، سیف اللہ چوہدری، مفتی عارف اور دیگر مقررین نے بھی خطاب کیا۔ جبکہ اس موقع پر سابق مشیر چوہدری اخلاق، سابق وزیر چوہدری رفیق نیر، سابق ممبر کشمیر کونسل چوہدری محبوب ایڈووکیٹ اور دیگر بھی موجود تھے۔

بیرسٹر سلطان محمود چوہدری نے کہا کہ میں بہت عرصے سے کہہ رہا ہوں کہ نواز شریف کو کشمیریوں کے خون سے غداری کی سزا ملی ہے اور آئندہ بھی ملتی رہے گی۔ مسلم لیگ ن کی حکومت آئندہ چوبیس گھنٹوں بعد اپنے انجام کو پہنچنے والی ہے اور اسکے بعد پاکستان میں عبوری حکومت قائم ہو جائے گی اور دو مہنیے بعد الیکشن کے نتیجے میں عمران خان پاکستان کے وزیر اعظم بنیں گے۔

آزاد کشمیر میں انکے وزیر اعظم بننے سے پہلے ہی حالات یکسر تبدیل ہو گئے ہیں اور اب ضرورت اس امر کی ہے کہ پی ٹی آئی کشمیر کو پہلے سے زیادہ مضبوط کیا جائے ہم مسئلہ کشمیر کو بین الاقوامی سطح پر بہتر انداز میں اٹھا سکیں اور عوامی مسائل کے حل کے لئے جدوجہد کر سکیں۔ جبکہ آزاد کشمیر میں مسلم لیگ ن کی حکومت نے کرپشن ، فراد اور سستی کا مظاہرہ کیا۔

ایک طرف تو آزاد کشمیر حکومت فنڈز نہ ہونے کا رونا روتی رہی۔ جبکہ دوسری طرف سات ارب روپیہ خرچ نہ ہونے کے باعث واپس ہو گیا۔انھوں نے کہا کہ اب چوبیس گھنٹوں کے بعد آزاد کشمیر حکومت کا بھی کوئی مقام نہیں رہے گا۔ جبکہ پیپلز پارٹی تو پہلے ہی قصہء پارینہ بن چکی ہے۔۔پیپلز پارٹی کبھی کبھی پی ٹی آئی سے اتحاد کی باتیں کرتی ہے لیکن عمران خان نے واضح طور پر کہہ دیا ہے کہ وہ پیپلز پارٹی سے اتحاد نہیں کریں گے وہ اپوزیشن میں تو بیٹھ سکتے ہیں لیکن کرپٹ لوگوں کے ساتھ حکومت میں نہیں بیٹھیں گے۔

اس موقع پر پی ٹی آئی کشمیر کے امیدوار اسمبلی چوہدری شوکت فرید نے کہا کہ میں بیرسٹر سلطان محمود چوہدری اور عمران خان کا اعتماد کرنے پر شکر گزار ہوں اور عمران خان کا پیغام گھر گھر پہنچائوںگا۔انھوں نے کہا کہ چڑہوئی پہلے بھی بیرسٹرسلطان محمود چوہدری کا قلعہ تھا اور آج بھی ان کا قلعہ ہے۔