کوہاٹ کے ضلعی پولیس سربراہ عباس مجید خان مروت نے حساس چیک پوسٹ میں پولیس اہلکاروں کیساتھ روزہ افطار

ضلعی پولیس سربراہ عباس مجید خان مروت نے افطاری سے کچھ دیر قبل شہر کے گرد واقع مختلف چیک پوسٹوں اور ناکہ بندیوںکے اچانک دورے کئے

منگل مئی 21:56

پشاور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 29 مئی2018ء) کوہاٹ کے ضلعی پولیس سربراہ عباس مجید خان مروت نے حساس چیک پوسٹ میں پولیس اہلکاروں کیساتھ روزہ افطار کیا ۔کوہاٹ پنڈی روڈ پر ایف آر جواکی(شین ڈھنڈ) بائی پاس کے قریب کیڈٹ کالج سے متصل واقع پولیس چیک پوسٹ میں تعینات اہلکاروںکیساتھ افطاری کے موقع پر ضلعی پولیس سربراہ نے پولیس جوانوں کے مسائل سے آگاہی حاصل کی اور ان میں نقد انعامات بھی تقسیم کئے۔

ایس پی آپریشنز کوہاٹ جمیل اختر ،ڈی ایس پی صدر ظاہر شاہ اور ایس ایچ او تھانہ محمد ریاض شہیداسلام الدین بھی افطاری میں شریک تھے۔ گزشتہ شام ضلعی پولیس سربراہ عباس مجید خان مروت نے افطاری سے کچھ دیر قبل شہر کے گرد واقع مختلف چیک پوسٹوں اور ناکہ بندیوںکے اچانک دورے کئے ۔

(جاری ہے)

دورے کے دوران ضلعی پولیس سربراہ کوہاٹ پنڈی روڈ پر شین ڈھنڈ بائی پاس کے قریب کیڈٹ کالج سے متصل واقع پولیس چیک پوسٹ پہنچے جہاں وہ پولیس اہلکاروں کیساتھ دستر خوان پر بیٹھ کر افطاری میں شریک ہوئے۔

ضلعی پولیس سربراہ نے اس موقع پر جوانوں کے مسائل سنے اور سخت گرمی میں روزے کی حالت کے باوجود عوام کی جان ومال کے تحفظ کیلئے مستعدی سے فرائض انجام دینے پرپولیس اہلکاروں میں نقد انعامات بھی تقسیم کئے۔دورے کے موقع پر ضلعی پولیس سربراہ عباس مجید خان مروت نے پولیس اہلکاروں کوحفاظتی واحتیاطی تدابیر کے حوالے سے اہم ہدایات جاری کرتے ہوئے انہیں سختی سے تاکید کی کہ وہ سیکیورٹی ڈیوٹی کے دوران حفاظتی آلات کا استعمال یقینی بنائیں ۔

بلٹ پروف جیکٹ و ہیلمٹ پہننے اور اسلحہ و ایمونیشن کو درست طور پر رکھنے میں کسی قسم کی کوتاہی نہ برتی جائے جبکہ روڈ پردن اور رات کے مختلف حصوں خصوصاً افطاری کے اوقات میں موجودہ حالات کے پیش نظرحفاظتی ڈیوٹی پر مامورمسلح پولیس اہلکارڈیوٹی پوائنٹ پر افطاری یقینی بنائیںتاکہ سیکیورٹی چیکنگ کو مئوثر اور نتیجہ خیز بنا کر اپنی اورساتھیوں سمیت عوامی تحفظ کے عوامل میں کوئی کسر باقی نہ رہے۔

کوہاٹ پولیس نے سال رواں چوری کی 16 گاڑیاں برآمدکرکے سرکاری تحویل میں لے لی ہیں۔صوبے بھر کی طرح کوہاٹ میں بھی گاڑیوں کی چوری روکنے کیلئے خصوصی مہم کے تحت جاری کاروائیوں میں برآمد ہونیوالی گاڑیوں میںغیر رجسٹرڈ، نان کسٹم پیڈ،چھینی گئی ومسروقہ اورجعلی نمبر پلیٹ کی حامل چھوٹی بڑی گاڑیاں شامل ہیں۔۔پولیس نے وہیکل ویریفیکیشن موبائل فون سروس کی جدید ٹیکنالوجی کو بروئے کار لاکر سال رواں دو لاکھ سے زائد مختلف قسم کی گاڑیوں کے رجسٹریشن دستاویزات،نمبر پلیٹس اور کریمینل ریکارڈ کی تصدیق کے بعد قانونی کاروائی عمل میں لاکر گاڑیاں تحویل میں لی ہیں۔

ضلعی پولیس سربراہ عباس مجید خان مروت نے موبائل فون وہیکل ویریفیکیشن سروس کی کارکردگی کے حوالے سے بتایا ہے کہ سنٹرل پولیس آفس پشاور سے منسلک کمپیوٹرائزڈ میکانزم کے تحت کام کرنے والی اس جامع سروس سے استفادہ کرتے ہوئے کوہاٹ پولیس نے سال رواں کے ابتدائی پانچ مہینوں کے دوران ضلع بھر کی مختلف شاہراہوں اور بین الصوبائی و بین الاضلاعی روٹس پر چلنے والی دو لاکھ سے زائد گاڑیوں کی چیکنگ کو یقینی بنایا اوراس دوران ہینڈ سیٹ موبائل ایس ایم ایس پر مبنی سروس کو موقع پر بروئے کار لاتے ہوئے 16گاڑیوں کو مختلف جرائم کے تحت قبضے میں لیا گیا جن میںغیر رجسٹرڈ،نان کسٹم پیڈ،چھینی گئی ومسروقہ اور جعلی نمبر پلیٹ کی حامل چھوٹی بڑی گاڑیاں شامل ہیں۔

ضلعی پولیس سربراہ عباس مجید خان مروت نے مزید بتایا کہ سال 2014کے دوران سنٹرل پولیس آفس پشاور میں قائم وہیکل ویریفیکیشن سروس کے ڈیٹا بیس میں ملک بھر سے ایکسائز رجسٹریشن اور کریمینل ڈیٹا ریکارڈاکٹھا کرکے اس کا دائرہ صوبے کے مختلف اضلاع تک وسیع کردیا گیا ہے اور مخصوص سافٹ وئیر کی حامل انڈرائیڈموبائل سیٹس ضلع کوہاٹ کے مختلف تھانوں،چوکیوں وچیک پوسٹوں اور پولیس اسسٹنس لائنز پا ل آفس کوبھی مہیا کئے گئے ہیںجو کسی بھی جگہ مشکوک گاڑیوں کی چھان بین کیلئے موبائل فون سیٹ میں موجود جدید ٹیکنالوجی سافٹ وئیر کو استعمال کرکے کچھ ہی لمحوں میں کریمینل ڈیٹا ریکارڈ معلوم کرسکتے ہیں۔

ضلعی پولیس سربراہ نے مزید کہا کہ موبائل وہیکل ویریفیکیشن سروس کے ذریعے عوام کی جان ومال کو تحفظ فراہم کرنے کے مقاصدبھی بہتر طور پر حاصل کئے جاسکتے ہیں کیونکہ ایسی گاڑیوں کے دہشتگردی اور مجرمانہ سرگرمیوں میں استعمال ہونے کا اندیشہ موجود رہتا ہے۔