ْروس، چین کے ساتھ تجارت کو 2020 ء تک بڑھا کر 200 ارب ڈالر کرنے کا خواہاں،موجودہ حجم 86 ارب ڈالر ہے

چین نے خود کو روس کے لیے اہم ترین تجارتی شراکت دار ثابت کیا،اس کے ساتھ تجارتی سرگرمیوںکو مختصر وقت میں 100 فیصد بڑھانا چاہتے ہیں نائب وزیر خارجہ ایگور مارگلوف کا تقریب سے خطاب

بدھ مئی 11:20

ماسکو ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 30 مئی2018ء) روس نے کہا ہے کہ وہ چین کے ساتھ اپنی تجارت کو 2020 ء تک بڑھا کر دوگنا کرنا چاہتا ہے۔نائب وزیر خارجہ ایگور مارگلوف نے گزشتہ روز ایک تقریب کے دوران کہا کہ چین نے حالیہ عرصے کے دوران خود کو روس کے لیے اہم ترین تجارتی و اقتصادی شراکت دار ثابت کیا ہے اور ہمارا ملک اس کے ساتھ تجارتی سرگرمیوں کو مختصر ترین مدت میں 100 فیصد بڑھانا چاہتا ہے۔

(جاری ہے)

انھوں نے کہا کہ دونوں ملکوں کی باہمی تجارت کو 2020 ء تک بڑھا کر 200 ارب ڈالر تک لانا ممکن ہے۔ان کا کہنا تھا کہ اس وقت روس اور چین کے درمیان تجارت کا حجم 86 ارب ڈالر ہے جسے جلد 100 ارب ڈالر تک لے جایا جائے گا۔یاد رہے کہ چین،، روس کا سب سے بڑا تجارتی شراکت دار ہے۔ دونوں ملک باہمی تجارت میں اضافے کے لیے قومی کرنسیوں کے استعمال کو توسیع دے رہے ہیں۔انھوں نے باہمی تجارت میں اضافے کے لیے روس۔۔چائنہ انویسٹمنٹ فنڈ کے نام سے ایک ادارہ بنارکھا ہے جس کے فنڈ کی مالیت 68 ارب یوان سے زیادہ ہے۔

متعلقہ عنوان :