امریکی ریاست مسوری کے گورنر ایرک رابرٹ گریئٹینس کاجنسی اسکینڈل میں مواخذے کے بعد مستعفی ہونے کا اعلان

بدھ مئی 21:50

جیفرسن سٹی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 30 مئی2018ء) امریکی ریاست مسوری کے گورنر ایرک رابرٹ گریئٹینس نے جنسی اسکینڈل میں مواخذے کے بعد مستعفی ہونے کا اعلان کیا ہے۔عالمی میڈیا کے مطابق امریکی ریاست مسوری کے گورنر ایرک گریئٹینس کو غیر ازدواجی تعلقات رکھنے کے الزام میں مواخذے کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے، انہوں نے اپنے خلاف منظر عام پر آنے والے جنسی اسکینڈل کو سیاسی شہرت کو نقصان پہنچانے کا حربہ قرار دیتے ہوئے جمعے کو مستعفی ہونے کا اعلان کردیا۔

44 سالہ ایرک گریئٹینس نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ گزشتہ دو ماہ میرے خاندان کے لیے انتہائی تکلیف دہ گزرے ہیں۔ اس دوران مجھ پر لغو اور بے بنیاد الزامات لگائے گئے۔ میں ملک کا ذمہ دار شہری اور آئین پر عمل کرنے والا گورنر ہوں اس لیے ایسے گھٹیا الزامات لگنے کے بعد مستعفی ہونے کا اعلان کر رہا ہوں۔

(جاری ہے)

امریکی ریاست مسوری کے گورنر کو مالیاتی بے ضابطگیوں کا بھی سامنا ہے۔

اٴْن پر الیکشن مہم کے دوران سیاسی حمایت حاصل کرنے کیلئے ریٹائرڈ فوجی اہلکاروں کی بہبود کیلئے چیریٹی فنڈز میں رقم جمع کرانے والوں کی فہرست میں ٹمپرنگ کا بھی الزام ہے۔واضح رہے امریکی ریاست مسوری کے گورنر ایرک رابرٹ کریئٹینس پر اپنی ہیئر ڈریسر کے ساتھ ناجائز تعلقات رکھنے کا الزام ہے جبکہ مذکورہ خاتون کی نیم برہنہ تصویر بھی گورنر نے ہی شائع کی تھی ۔ ایرک رابرٹ نے خاتون کی تصویر لینے کی تو تصدیق کی تھی لیکن اسے ہراساں کرنے کے الزام کی تردید کی تھی۔