مقبوضہ بیت المقدس کو اسرائیلی دارالحکومت تسلیم کرنے اور سفارت خانے بیت المقدس منتقل کرنے والے ممالک کا بائیکاٹ کیا جائے، الشیخ محمد حسین

فلسطین اور دیارمقدسہ کے مفتی اعظم اور جید عالم دین کا اسلامی اور عرب ممالک سے مطالبہ

جمعرات مئی 15:06

رباط ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 31 مئی2018ء) فلسطین اور دیارمقدسہ کے مفتی اعظم اور جید عالم دین الشیخ محمد حسین نے مطالبہ کیا ہے کہ مقبوضہ بیت المقدس کو قابض اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے اور اپنے سفارت خانے تل ابیب سے بیت المقدس منتقل کرنے والے ممالک کا بائیکاٹ کیا جائے۔مرکزاطلاعات فلسطین کے مطابق مراکش کے شہر طنجہ میں ایک تقریب سے خطاب میں فلسطینی مفتی اعظم نے کہا کہ مسلمان اور عرب ممالک ان ملکوں سے تعلقات ختم کردیں جو القدس کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرتے ہیں۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ القدس کے ساتھ مسلمانوں کی مذہبی اور تاریخی وابستگی کا اظہار ایسے کیا جائے کہ دنیا کو اس کا پتا چلے۔ مسلمان اور عرب ممالک کی حکومتیں دینی حمیت کا مظاہرہ کرتے ہوئے بیت المقدس کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے والے ممالک سے تمام معاہدے ختم کریں اور ان کا ہرسطح پر بائیکاٹ کیا جائے۔انہوں نے کہا مسلمان ممالک کی طرف سے القدس کی حمایت میں بہت سی قراردادیں منظورکی جا چکی ہیں ۔ ان قراردادوں اور اسلامی تعاون تنظیم’او آئی سی‘کے فیصلوں پرعمل درآمد کا وقت آگیا ہے۔الشیخ محمد حسین نے کہا کہ اوآئی سی کی قراردادوں پران کی روح کے مطابق عمل کرنے سے فلسطینی قوم اپنے حقوق حاصل کرنے میں کامیاب ہوسکتی ہے۔

متعلقہ عنوان :