افندی ہوٹل گیس لیکج دھماکے میں جاںبحق ہونیوالے 7افراد کی ہلاکت سے متعلق تحقیقاتی اداروں کی کارکردگی صفر ہے ، لواحقین نے پریس کانفرنس میں نئے سرے سے تحقیقات کروانے کا مطالبہ کردیا

جمعرات مئی 22:50

ہنگو(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 31 مئی2018ء) کچھ عرصہ قبل پشاور افندی ہوٹل گیس لیکج دھماکے میں شہید ہونیوالے ایک ہی خاندان کی 7افراد کا حکومت نے کوئی حال نہیں پوچھا ،اتنے بڑے سانحہ کے باوجود وزیر اعلی تو دور کی بات حکومتی وزیر یا افسر نے نہ رابطہ کیا اور نہ ہسپتال انے کا دورہ گوارا کیا صوبائی حکومت کی نااہلی کی وجہ سے حادثے میں دو زخمی افراد کو علاج کیلئے پنجاب منتقل کرنا پڑا ۔

ان خیالات کا اظہار تین ہفتے قبل پشاور آفندی ہوٹل کے کمرے میں گیس لیکج دھماکے سے شہید ہونے والے ایک ہی خاندان کے 7افراد کے لواحقین گل باد خان سلیم بنگش عبدوالی نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔انہوںنے کہاکہ تین ہفتے سے زیادہ عرصہ ہو چکا مگر تحقیقاتی اداروں کی کارکردگی صفر ہے ۔

(جاری ہے)

انہوںنے کہاکہ صوبائی حکومت کی نااہلی کی وجہ سے حادثے میں دو زخمی افراد کو علاج کیلئے پنجاب لے جانا پڑا کیونکہ یہاں پر کسی بھی قسم کے سہولیات اور علاج میسر نہیں تھا اتنا بڑا سانحہ ہونے کے باوجود نہ تو وزیر اعلی نے پوچھا نہ کسی وزیر یا افسر نے رابط کیا انہوںنے ہسپتال انا بھی گوارا نہیں کیا شہید افراد کے لواحقین نے گورنر خیبر پختونخواہ اقبال ظفر جھگڑا سے مالی معاونت اور حادثے کی نئے سرے سے تحقیقات کرنے کا مطالبہ کیاہے ۔

انہوںنے کہاکہ ہوٹل انتظامیہ کے خلاف کاروائی کی جائے اس حوالے سے انہوںنے چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس ثاقب نثار سے سوموٹو ایکشن لینے کا مطالبہ کیاہے ۔