ہم نے اس شہر میں ظلم کے خلاف اس وقت آواز لگائی جب سچ بولنے کی سزا موت تھی، مصطفی کمال

جمعرات مئی 23:14

ہم نے اس شہر میں ظلم کے خلاف اس وقت آواز لگائی جب سچ بولنے کی سزا موت ..
کراچی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 31 مئی2018ء) پاک سر زمین پارٹی کے چیئر مین سید مصطفی کمال نے کہاکہ ہم نے اس شہر میں ظلم کے خلاف اس وقت آواز لگائی جب سچ بولنے کی سزا موت تھی لیکن ہم ڈرے نہیں ہم ظلم کے آگے ڈٹے رہے اور آج صرف اللہ کی رضا سے پاک سر زمین پارٹی سب کی امیدوں کا مرکز بن گئی ہے یہ ووٹ میرے ساتھ قبر میں نہیں جائینگے ہم ووٹ لینگے لیکن بھائیوں کو بھائیوں سے لڑا کر ووٹ نہیں لینگے انہوں نے کہا کہ اگر آپ کی آنے والے بچوں کے بہتر مسبقل کے لئے، اسپتال میں دوائیں چاہئے پینے کا صاف پانی چاہیے آپ لوگوں کوہمارا ساتھ دینا ہوگاان خیالات اظہار انہوں نے پاکستان ہاوس میں الآصف اسکوئر سے فیصل بنگش کی سربراہی میں پختون برادریوں کے وفدخطاب کر تے ہوئے کہی۔

اس مو قع پر پی ایس پی کے چیئر مین مصطفی کمال نے کہاکہ آج شہر کچرا کنڈی بنا ہوا ہے، اسپتالوں میں دوائیں نہیں،پینے کا صاف پانی نہیں اور جگہ جگہ کندگی کے ڈھیر لگے ہوئے ہیں اورآپ لوگوں کے پاس پاک سر زمین پارٹی سے بہتر کوئی آپشن نہیں کیونکہ ہم جانتے ہیں کیونکہ اس شہر کو آخری بار ہم نے ہی بنایا اور آیندہ بھی انشائ اللہ ہم ہی بنائینگے اور ان سب مسائل کو پاک سر زمین پارٹی ہی حل کریگی انہوں نے کہاکہ مہاجر پختون صرف اس دنیا سے ہے ہماری اصل شناخت ایک رسول کی امت ہے تو کیا میں ووٹوں کی خاطر تم لوگوں کو آپس میں لڑا کر ٹکڑوں میں بانٹ دوں تو اس امت کو توڑنے پر اللہ اور اس کا رسول مجھ سے ناراض ہونگے میں ایسا ہر گز نہیں کر سکتا اس مو قع پر الآصف اسکوئر سے فیصل بنگش کی سربراہی میں پختون برادریوں کے وفدپی ایس پی میں شمولیت کا اعلان۔

(جاری ہے)

اسی طرح چیئرمین پاک سر زمین پارٹی سید مصطفی کمال کی پاپوش نگر،چاندنی چوک دورہ کیا وہاں موجود لوگوں سے ملاقات کی کہاکہ حکومت ختم کرنے سے ایک مہینہ پہلے ان کو صوبہ بنانا یاد آجاتا ہے یہ مہاجروں کو اس نعرے کے پیچھے لگا کر صرف الیکشن میں تمہارے جذبات جگا کر ووٹ لینا چاہتے ہیں یہ مہاجر مہاجر کرکے بلوچوں کو پختونوں کو تم سے لڑانا چاہتے ہیں انہوں نے کہا کہ میں نے یہ پارٹی لوگوں کی فلاح کیلئے بنائی ہے اگر ہمارے کسے کارکن کے کسی فعل سے کسی کو تکلیف پہنچی تو میں ایک سیکنڈ نہیں لگاونگا اس پارٹی کو ختم کرنے میں میں اپنے ہاتھ سے اپنے آفسز کو تالا لگاونگا۔#