متحدہ مجلس عمل نے مذہبی فرقہ واریت کو دفن کردیا، سیاسی فرقہ واریت کا خاتمہ بھی کرے گی،علامہ عارف حسین واحدی

الیکشن2018 میں کوئی بھی سیاسی جماعت واضح اکثریت حاصل نہیں کرسکے گی ،مخلوط حکومت کا قیام خارج از امکان نہیں، قومی راز ملک،ریاست اور قوم کی امانت ہوتے ہیں، آپس کی چپقلش میں ملک کو کسی صورت نقصان نہیں ہونا چاہئے،نگران سیٹ اپ میںتاخیر جمہوریت کی کمزوری ہوگی، متحدہ مجلس عمل ملکی سیاست میں طوفان برپا کریگی ڈپٹی جنر ل سیکرٹری متحدہ مجلس عمل کی میڈیا سے گفتگو

جمعہ جون 17:47

ٹیکسلا (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 01 جون2018ء) ڈپٹی جنر ل سیکرٹری متحدہ مجلس عمل ، جنرل سیکرٹری کور کمیٹی علماء مشائخ کونسل پاکستان،، ممبر کونسل آف اسلامک آئیڈیالوجی علامہ عارف حسین واحدی نے کہا ہے کہ متحدہ مجلس عمل نے مذہبی فرقہ واریت کو دفن کردیا، سیاسی فرقہ واریت کے خاتمہ بھی ایم ایم اے کرے گی،الیکشن2018 میں کوئی بھی سیاسی جماعت واضح اکثریت حاصل نہیں کرسکے گی ،مخلوط حکومت کا قیام خارج از امکان نہیں، قومی راز ملک،ریاست اور قوم کی امانت ہوتے ہیں، آپس کی چپقلش میں ملک کو کسی صورت نقصان نہیں ہونا چاہئے،نگران سیٹ اپ میںتاخیر جمہوریت کی کمزوری ہوگی، متحدہ مجلس عمل کی اٹھان ملکی سیاست میں طوفان برپا کریگی ، اٹھان کے ساتھ اڑان بھی اچھی ہوگی،،متحدہ مجلس عمل آمدہ الیکشن میں بڑی سیاسی قوت بن کر ابھرے گی، 2018 میں حیران کن نتائج آئیں گے،ملک میں جاری سیاسی بحران کے خاتمہ میں بھی متحدہ مجلس عمل کا کردار کلیدی اہمیت کا حامل ہوگا،،ایم ایم اے فاٹا بل کے حوالے سے قومی مفاد میں فیصلہ کرے گی،جے یو آئی کے چند تحٖفظات ہیں ، اس پر بات چیت چل رہی ہے جلد ایک نقطہ پر آجائیں گے،ن خیالات کا اظہار انھوں نے ماڈل ٹاون ٹیکسلا میں سید اظہر حسین شاہ کی اہلیہ جرنلسٹ سید نوید عبا س کی خواشدامن کی وفات پر لواحقین سے اظہار تعزیت کے بعد مقامی میڈیا سے گفتگو کے دوران کیا، علامہ عارف حسین واحدی کا کہنا تھا کہ پاکستان میں عدم استحکام کی بڑی وجہ دہشتگردی ، شدت پسندی تخفیر، مسالک کے درمیان اختلاف ڈالنا ہے ، اسکا علاج ملی یکجہتی کونسل یا ایم ایم اے نے کردیا ہے، ملک میں جاری سیاسی بحران کے خاتمہ میں بھی متحدہ مجلس عمل کا کردار کلیدی اہمیت کا حامل ہوگا،نئی حلقہ بندیوں کے حوالے سے کچھ شکوک و شبہات سامنے آرہے ہیں ہمارا مطالبہ ہے کہ الیکشن وقت پر ہونا چاہئیں، اسی میںجمہوریت کا حسن ہے اورجمہوری اداروں کا استحکام وقت کی ضرورت ہے،انکا کہنا تھا کہ سیاسی پارٹیاں ایک دوسرے کو نیچا دکھانے کی کوشش کر رہی ہیں،کوئی ملک کا غدار کہہ رہا ہے کسی کو ملک کے لئے سیکورٹی رسک قرار دیا جارہا ہے،اقتدار کے لئے ایک دوسرے کے دست و گریبان ہیں،اس بحران اور خلا کو ختم کرنے میں بھی متحدہ مجلس عمل اہم کردار ادا کرے گی،ہم نے مذہبی فرقہ واریت کو دفن کردیا ہے،ملک میں جاری سیاسی فرقہ واریت کا علاج بھی متحدہ مجلس عمل ہی کے پاس ہے،تمام مسالک کے جید علماء متحدہ مجلس عمل کے پلیٹ فارم پر ہاتھوں میں ہاتھ دیکر اکھٹے کھڑے ہیں،،متحدہ مجلس عمل کا ہدف قرا ن وسنت کی بالا دستی ، کرپشن کا خاتمہ ہے،،پاکستان کا استحکا م ہے،بیرونی طاقتیں جس طرح پاکستان کو اپنا غلام بنا کر ،اپنے قومی پنجو ں میں جکڑ کر رکھنا چاہتی ہے،ہم انشا اللہ وہ تمام زنجیریں توڑیں گے، کشمیر ، فلسطین ،،دنیا میں کو جو امت مسلمہ کے ساتھ ہورہاہے،پوری دنیا کے مسلمانوں کے لئے لمحہ فکریہ ہے،،امریکہ کی سرکردگی میں منحوس تیکون اسرائیل اور انڈیا ،جو مسلمانوں کو تقسیم اور کمزورکرنے کے درپے ہیں،ہم دشمن شناسی کا درس قوم کو دے رہے ہیںکہ یہ اصل دشمن ہیں امت کے،ہم دنیا میں امت کو پیغام دے رہے ہیں کہ آو اگر پاکستان میںسب مسالک ملکر یہ کردار ادا کرسکتے ہیں اور اس ماحول میں اکھٹا بیٹھ سکتے ہیں اور ملک کو امن کا گہوارہ بنانے کی طرف پیس رفت کر رہے ہیں توتمام ممالک میں تمام مسالک ایک پلیٹ فارم پر اکھٹے ہوکر دشمن قوتوں کا ڈٹ کر مقابلہ کریں، تاکہ امت کامیاب ہو اور دشمن زلیل ہو،،فاٹا انضمام بل کے حوالے سے انکا کہنا تھا کہ جے یو آئی کے چند تحٖفظات ہیں ، اس پر بات چیت چل رہی ہے جلد ایک نقطہ پر آجائیں گے،،ایم ایم اے فاٹا بل کے حوالے سے قومی مفاد میں فیصلہ کرے گی،آمدہ الیکشن کے حوالے سے انکا کہنا تھا کہ ملکی سیاسی صورتحال سے نہیں لگتا کہ کوئی بھی سیاسی جماعت واضح اکثریت حاصل کر پائے گی تاہم مخلوط حکومت بننے کے واضح امکانات نظر آرہے ہیں، اس موقع پر سید نوید عباس ، سید ضیا حسین شاہ،سید نجم الحسن شاہ ، سید سبطین شاہ ، ثقلین شاہ ،اشتیاق شاہ ، محسن نقوی ، زاہد شاہ ، ڈاکٹر صابر ، حافظ وسیم ، نعمان فاروق ، مشتاق ترک کے علاوہ کثیر تعداد میں لوگ موجود تھے۔