دہشت گردی ، انتہاپسندی کے خاتمے کیلئے ریاستی ستونوں میں ہم آہنگی و اشتراک ِ عمل نا گزیر ہے،ایس ڈی پی آئی ۔ نیکٹا

جمعہ جون 20:50

اسلام آباد: (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 01 جون2018ء) پاکستان سے دہشت گردی اور انتہا پسندی کا خاتمہ حکومت تنہا نہیں کر سکتی۔ اس کے لئے ضروری ہے کہ چاروں ریاستی ستونوں میں ہم آہنگی پیدا کر کے بہتر اشتراک عمل کی فضا ء قائم کر کے پائیدار امن کو یقینی بنانا ممکن ہو سکے گا۔ ملک کے سماجی ادارے ملک کو درپیش خطرات کا مکمل ادراک رکھتے ہیں اور قومی ذمہ داری کو محسوس کرتے ہوئے اپنا کردار ہر ممکن ادا کرنے سے گریزاں نہیں ہو ں گے۔

ان خیالات کا اظہار قومی ادارہ برائے انسداد دہشت گردی کے ہیڈ آفس میں پالیسی ادارہ برائے پائیدار ترقی کے سر براہ ڈاکٹر عابد قیوم سلہری اور قومی ادارہ برائے انسداد دہشت گردی حکومت پاکستان کے سر براہ احسان غنی نے دونوں اداروں کے مابین مفاہمتی یادداشت پر دستخط کرنے کی تقریب کے دوران کیا۔

(جاری ہے)

مفاہمت کا مقصد پالیسی ادارہ برائے پائیدار ترقی کی جانب سے اعلیٰ معیاری تحقیق کے ذریعے قومی فریضہ میں اشتراکیت ہے۔

مزید جدید تحقیقی اسلوب سے روشناس کرواتے ہوئے ادارے کی صلاحیتوں کو بہتر بنانے میں مدد فراہم کرناہے۔دونوں سربراہان نے اس امر پر بھی اتفاق رائے کیا کہ دونوں ادارے اپنے مینڈیٹ ، آئینی و قانونی حدود میں رہتے ہوئے مفاہمتی یاد داشت پر عمل کریں گے۔ اس موقع پر خیالات کا اظہار کرتے ہوئے احسان غنی نے کہا کہ سماجی ادارے سے مفاہمت کا مقصد دہشت گردی اور انتہا پسندی سے معاشرے کو محفوظ بنانے کے لئے مل کر جدو جہد کرنا ہے جس میں اعلیٰ تحقیق سے استفادہ کرنا ، استعداد کار میں اضافہ اور صلاحیتوں میں نکھار پیدا کرنا ہے تاکہ دہشت گردی اور انتہا پسندی پر قابو پانے کے لئے بہتر صلاحیتوں کو بروئے کار لایا جا سکے ۔

اس موقع پر پالیسی ادارہ برائے پائیدار ترقی کے سر براہ ڈاکٹر عابد قیوم سلہری نے کہا کہ پاکستان کے تمام ریاستی ادارے اپنی جانوں کے نذرانے پیش کرتے ہوئے دہشت گردی اور انتہا پسندی کے خاتمے کے لئے وسائل اور صلاحیتوں سے بڑھ کر کارکردگی کا مظاہرہ کر رہے ہیں جو کہ ہماری قومی تاریخ میں درخشاں باب کی حیثیت رکھتاہے۔ انہوں نے کہا معاشرے کو پُر امن بنا کر پائیدار ترقی کا خواب شرمندہ تعبیر ہو سکتا ہے۔

ایس ڈی پی آئی ، نیکٹا کو ہر ممکن اعلیٰ تحقیقی مواد کی فراہمی کو یقینی بناتے ہوئے جدید تحقیقی اسلوب سے بھی مستفید ہونے کے ہر ممکن مواقع فراہم کرے گا۔ اس سے پاکستان کی طرف سے عالمی معاہدات میں عمل درآمد میں مدد ملے گی۔ جس میں پائیدار ترقی کے اہداف میں ہدف نمبر 16 جو کہ امن ، انصاف اور مضبوط اداروں کے حوالے سے ہے ، عابد قیوم سلہری نے مزید کہا کہ چاروں ریاستی ستونوں کو انتہا پسندی اور دہشت گردی کے خاتمے کے لئے مل کر کام کرنا ہو گا۔ اس موقع پر پالیسی ادارہ برائے پائیدار ترقی کے ڈاکٹر وقار احمد ، احمد سلیم اور ٹیکٹا کے اعلیٰ حکام بھی موجود تھی# وقار)

متعلقہ عنوان :