مئی میں شامی تنازعے میں ہلاکتوں کی تعداد میں نمایاں کمی رہی،رپورٹ

گذشتہ ماہ 58بچے اور 33خواتین سمیت کل 244افراد لقمہ اجل بنے،ہیومن رائٹس

ہفتہ جون 20:26

دمشق(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 02 جون2018ء) شامی تنازعے پر نگاہ رکھنے والی تنظیم سیریئن آبزرویٹری فار ہیومن رائٹس کا کہنا ہے کہ مئی کے مہینہ شامی تنازعے میں ہلاکتوں کی تعداد میں نمایاں کمی رہی،گذشتہ ماہ 58بچے اور 33خواتین سمیت کل 244افراد لقمہ اجل بنے۔غیر ملکی میڈیا کے مطابق شام میں عام شہریوں کی کم ترین ہلاکتوں کے اعتبار سے مئی کا مہینہ نمایاں رہا۔

(جاری ہے)

شامی تنازعے پر نگاہ رکھنے والی تنظیم سیریئن آبزرویٹری فار ہیومن رائٹس کے مطابق مئی میں شام بھر میں مجموعی طور پر 244 افراد ہلاک ہوئے، جن میں 58 بچے اور 33 خواتین تھیں۔ گزشتہ سات برس سے جاری شامی تنازعے میں یہ پہلا مہینہ تھا جب عام شہری ہلاکتوں کی تعداد ڈھائی سو سے کم رہی۔ آبزرویٹری کے مطابق مئی میں ہونے والی ہلاکتوں میں سے 77 عام شہری حکومتی فورسز کی بمباری کا نشانہ بنے جب کہ 19 روسی فضائی کارروائیوں کے باعث لقمہ اجل بنے۔

متعلقہ عنوان :