فضل الرحمن جو پیپلزپارٹی اور ایم کیوایم کی باہمی رضا مندی سے چیف سیکریٹری بھی رہے ، ثابت کریں وہ غیر جانبدار ہیں ، ایاز لطیف پلیجو

سندھ میں جی ڈی اے بھاری اکثریت سے جیت کر حکومت بنائے گی۔ سندھ کے نگراں وزیراعلیٰ ماضی کی تاریخ دہرانے کے بجائے غیر جانبداری کا مظاہرہ کرتے ہوئے صاف اور شفاف انتخابات کرائیں، جنرل سیکرٹری گرینڈ ڈیموکریٹک الائنس

ہفتہ جون 22:21

حیدرآباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 02 جون2018ء) گرینڈ ڈیموکریٹک الائنس کے جنرل سیکریٹری اور قومی عوامی تحریک کے صدر ایاز لطیف پلیجو نے کہا ہے کہ فضل الرحمن جو پیپلزپارٹی اور ایم کیوایم کی باہمی رضا مندی سے چیف سیکریٹری بھی رہے اور اب نگراں وزیراعلیٰ بھی بنے وہ ثابت کریں کہ وہ غیرجانبدار ہوں گے اور سندھ کی تمام سیاسی جماعتوں سے برابری کی بنیاد پر سلوک کریں گے ۔

وہ حیدرآباد پریس کلب میں میڈیا سے گفتگو کررہے تھے۔ اس موقع پر ان کے ہمراہ مسلم لیگ(فنکشنل) کے رہنما سردار عبدالرحیم ، ڈاکٹر گلزار جمانی اور دیگر بھی موجو دتھے۔ایاز لطیف پلیجو نے کہاکہ تحریک انصاف اور دیگر گروپوں سے انتخابی اتحاد کیلئے بات چیت آخری مراحل میں ہے ، سندھ میں جی ڈی اے بھاری اکثریت سے جیت کر حکومت بنائے گی۔

(جاری ہے)

سندھ کے نگراں وزیراعلیٰ ماضی کی تاریخ دہرانے کے بجائے غیر جانبداری کا مظاہرہ کرتے ہوئے صاف اور شفاف انتخابات کرائیں۔

انہوں نے کہاکہ اب تک جی ڈی اے کو صوبائی اسمبلی کی 80 اور قومی اسمبلی کی 45 نشستوں کیلئے درخواستیں موصول ہوئی ہیں جن میں امیدواروں نے جی ڈی اے کے ٹکٹ حاصل کرنے کیلئے خواہش ظاہر کی ہے۔ اسی طرح سندھ کے تمام اضلاع کے وہ لوگ جو عوام سے جڑے ہوئے ہیں وہ جی ڈی اے کے پلیٹ فارم پر انتخاب لڑنا چاہتے ہیں اور اسی حوالے سے وہ پیرصاحب پگارا سے ملاقاتیں کررہے ہیں۔

انہوں نے کہاکہ ہمارا موقف ہے کہ الیکشن وقت پر ہونے چاہئیں اور عوام کو ایک مرتبہ پھر اپنے ووٹ کا حق ملے ، سندھ کے عوام دباؤ ، دھونس اور دھاندلی سے آزاد ہوکر اپنا ووٹ ڈالیں ۔ انہوں نے کہاکہ وزیراعظم اور نگراں وزیراعلیٰ کیلئے مسلم لیگ (فنکشنل) سمیت دیگر جماعتوں سے مشاورت ہونی چاہئے تھی ۔ انہوں نے کہاکہ نگراں وزیراعلیٰ فضل الرحمن ماضی میں ذوالفقار آباد پروجیکٹ کے انچارج بھی رہے ہیں اور اس وقت ان پر کڑی تنقید بھی کی جاتی رہی ہے اس کے علاوہ وہ ایس آئی ڈی پروجیکٹ کے انچارج بھی رہے جس کا کام سندھ میں آر او پلانٹ لگانا تھا اور انہوں نے 17 بلین روپے سندھ میں آر او پلانٹ کیلئے حاصل بھی کئے اب وہ آر او پلانٹ کسی جگہ فعال نہیں ہیں، حال ہی میں واٹر کمیشن کے چیئرمین جسٹس (ر) امیر ہانی مسلم نے ان پلانٹوں پر سخت باز پرس بھی کی ہے ۔

انہوں نے کہاکہ سندھ کی زراعت تباہ ہوگئی ہے ۔ پانی ناپید ہوگیا ہے۔ 18-18گھنٹے لوڈشیڈنگ کی جارہی ہے ، سندھی، اردو ، پنجابی، پختون بولنے والوں کو آنے والے انتخابات میں کرپٹ لوگوں کو الیکشن میں آنے سے روکنا ہوگا۔ اس موقع پر وہاں موجود مسلم لیگ(فنکشنل) کے رہنما سردار عبدالرحیم نے کہاکہ سندھ میں 10 سال میں جو کرپشن کی گئی ہے اس سے جان چھڑانے کیلئے جی ڈی اے بنایا جائے ، ہمارا مقصد اقتدار میں آنا نہیں بلکہ عوام کو ریلیف دینا ہے۔ انہوں نے کہاکہ سندھ میں جتنے نوزائیدہ بچے پیدا ہوتے ہیں ان میں 10فیصد پیدائش کے وقت مرجاتے ہیں اور باقی 15فیصد بعد میں ، اس کی وجہ بیڈ گورننس ہے۔ انہوں نے کہاکہ ہمیں پوری امید ہے کہ سپریم کورٹ کے ہوتے ہوئے الیکشن صاف اور شفاف ہوں گے۔