پاکستان میں سالانہ ایک لاکھ 68 ہزار نوزائیدہ بچے فضائی آلودگی کے باعث موت کا شکار ہو جاتے ہیں

اتوار جون 10:40

ْ اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 03 جون2018ء) پاکستان میں سالانہ ایک لاکھ 68 ہزار نوزائیدہ بچے فضائی آلودگی کے باعث موت کا شکار ہو جاتے ہیں جبکہ 16.28 ملین افراد براہ راست فضائی آلودگی کے باعث صحت کے مسائل کا شکار ہو جاتے ہیں۔ ماحولیات کے شعبہ کے ماہرین نے کہا کہ پاکستان میں فضائی آلودگی بین الاقوامی معیار سے تجاوز کر گئی ہے جس کی وجہ تکنیکی سہولتوں کا فقدان اور عوام میں شعور کی کمی ہے۔

(جاری ہے)

انہوں نے مزید کہا کہ فضائی آلودگی کے اضافہ کے بنیادی اسباب میں درختوں اور جنگلات کی کمی سمیت صنعتی آلودگی اور ٹریفک میں ہونے والا بے پناہ اضافہ شامل ہے۔ انہوں نے کہا کہ پنجاب میں گاڑیوں کی تعداد میں سالانہ 12 فیصد اضافہ ہو رہا ہے اور 20 سال قبل صوبہ میں صرف 8 لاکھ گاڑیاں تھیں جن کی تعداد 50 لاکھ سے تجاوز کر چکی ہے۔ انہوں نے کہا کہ فضائی آلودگی کے تدارک اور اس کے نقصانات سے تحفظ کیلئے جامع حکمت عملی کے تحت اقدامات کی ضرورت ہے تاکہ انسانی صحت پر ہونے والے مضر اثرات سے بچا جا سکے۔