راولپنڈی، شہر بھر میں سے بجلی و پانی سمیت گیس کے غائب ہونے سے شہریوں کی زندگیاں مفلوج ،سحری وافطاری کے اوقات میںغیراعلانیہ لوڈشیڈنگ سے شہریوںکودشواری کا سامنا

اتوار جون 21:30

راولپنڈی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 03 جون2018ء) شہر بھر میں سے بجلی و پانی سمیت گیس کے غائب ہونے سے شہریوں کی زندگیاں مفلوج بن کر رہ گئی شدید گرمی اور رمضان میں سحری اور افطاری کے ٹائم بجلی کی غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ نے شہریوں کا جینا محال بن کر رکھا دیا ہے گرمی کی شدت میں اضا فہ ہونے سے غیراعلانیہ لوڈشیڈنگ میں اضافہ کردیا گیا جبکہ ہر2سے تین گھنٹے کے بعد ایک گھنٹے کی غیراعلانیہ لوڈشیڈنگ کی جارہی ہے غیراعلانیہ لوڈشیڈنگ کی وجہ سے شہربھر میں پانی کے بحران میں مذید اضافہ ہونے سے شہریوں کی چیخیں نکل آئی جبکہ سحری وافطاری کے اوقات میںغیراعلانیہ لوڈشیڈنگ سے شہریوںکودشواری کا سامنا کرنا پڑا رہا ہے جبکہ واسا حکام کی نااہلی کے باعث شہر بھر میں پانی کا شدید بحران پیدا ہو گیا ہے جس کے باعث شہری یومیہ واسا کے دفترکیسامنے احتجاج کرنے پر مجبور ہو گئے ہیں لیکن واسا حکام نے مکمل خاموشی اختیار کر رکھی ہوئی ہے اور سب اچھا کی رپورٹ اپنارکھی ہوئی ہے دریں اثناء حکام کی نااہلی کے باعث ڈھوک کالاخان میںگیس لیک ہونیکی وجہ سے آگ بڑک اٹھی جس کے باعث علاقہ میں خوف ہرس پھیل گیا اطلاعات کے مطابق کوئی جانی نقصان نہیںہوا 1122کے عملے نے آگ پر قابو پانے کے بعد پھر سے آگ بڑک اٹھی تھی شہری نے اپنی مدد آ پ کے تحت دوبارہ آگ پرقابو پالیا تھا جس کے باعث شہریوں کو افطاری میں شدید مشکلات کا سامنا رہا جبکہ شہریوں کا کہنا ہے کہ محکمہ سوئی نادرن گیس کے عملے کو واقع کی بر وقت اطلاع کی گئی تھی تاہم عملے کا کوئی بھی ذمہ دار اموقع پر نہ پہنچا شہریوں کا کہنا تھا کہ آگ پر بروقت قابو پا لیا گیا تھا جس کے باعث کوئی بھی خطرناک حادثہ رونما نہ ہو سکا لیکن پورے علاقہ کو افطاری میں شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا جبکہ ادھر پانی کے کا شدید بحران ہونے کے باعث شہری دور دراز علاقوں سے پانی لانے پر مجبور ہو گئے ہیںجبکہ پانچ سال گزر جانے کے باوجود صوبائی حکومت سمیت واسا کی طرف سے راولپنڈی شہر کے لیے پانی کی کمی کو پورا کرنے کے لیے کسی قسم کے کوئی اقدامات نہیں کئے گئے جس کے باعث شہربھر میں پانی کا شدید بحران پیدا ہو گیا ہے جبکہ رہی سہی کسر غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کی پوری کر رکھی ہے جس کے باعث شہری بلبلا اٹھے ہیں غیر اعلا نیہ طویل لوڈشیڈ نگ نے شہر کے فلٹریشن پلا نٹ اور ٹیوب ویلوں کی خرابی اور واسا حکام کی عد م دلچسپی کے با عث راولپنڈی میں پانی کا بحران شدت اختیار کر گیا ہے راولپنڈی کے بیشتر علاقے تمام تر دعوئوں کے با وجود کربلا کا منظر پیش کررہے ہیں عوام ٹینکروں اور دور دارز علاقوں سے پا نی لا نے پر مجبو ر ہوچکے ہیں متاثرہ علاقوں کے شہر ی روزانہ واسا دفتر کے سامنے احتجاجی مظاہرے کرتے ہیں جبکہ اعلیٰ حکام اور ارباب اختیا ر اپنے ائیر کنڈیشن دفاتر میں عوام کے مسائل پر چشم پوشی اختیا ر کئے ہوئے خواب غفلت کے مزے لوٹ رہے ہیں دریں اثناء پاکستان مسلم لیگ (ن) پنجاب کونسل کے ممبر ملک پرویز حیدر نے فلٹریشن پلانٹ ، ٹیوب ویلوں کی خرابی اور پانی کی مصنوعی قلت پر شدید احتجاج کر تے ہوئے مطالبہ کیا کہ خراب ٹیوب ویلوں کی درستگی اور فلٹر یشن پلانٹ کی فنی خرابی کو درست کیا جائے اور عوام کو پا نی کی قلت سے نجات دلا ئی جائے دریں اثنا ڈھوک کالا خان میں گیس کی پائپ لائن لیک ہونے کی وجہ سے آگ بڑک اٹھی آگ لگنے کی وجہ سے شہریوں میں خوف ہراس پھیل گیا آگ 1122 کا عملہ آگ بجا کر گیا تاہم آگ پھر سے بڑک اٹھی محکمہ سوی نادرن گیس کے عملے کو واقع کی بر وقت اطلاع کی گئیتاہم عملے کا کوئی بھی ذمہ دار ابھی تک موقع پر نہ پہنچا شہریوکاکہنا ھے کے آگ پر بروقت قابو نہ پایا گیا تو کوئی بھی خطرناک حادثہ رونما ہوسکتا ھی