سحری کے وقت ڈھول بجا کر اٹھانے کا رواج دم توڑنے لگا

اسمارٹ فون جنریشن ایسی قدیمی روایات کے اتنے گرویدہ نہیں رہے اور نصف شب کو بستر میں دراز ہوتے وقت وہ ڈھول کی تھاپ کو نیند میں خلل بھی محسوس کرتے ہیں۔ماہرین

Mian Nadeem میاں محمد ندیم پیر جون 12:38

سحری کے وقت ڈھول بجا کر اٹھانے کا رواج دم توڑنے لگا
لاہور(اردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین-انٹرنیشنل پریس ایجنسی۔04 جون۔2018ء) پاکستان کے مختلف شہروں میں روزوں کے دوران سحری کے وقت ڈھول بجا کر اٹھانا تقریباً ایک دہائی قبل تک خاصا مقبول تھا۔ اب یہ ثقافتی روایت بتدریج معدوم ہوتی جا رہی ہے۔پاکستانی شہروں اور قصبوں میں رمضان کی سحریوں میں ڈھول بجا کر لوگوں کو اٹھانے والے اسے مذہبی عمل سمجھنے کے ساتھ ساتھ معاشی آسودگی کا ذریعہ بھی خیال کیا کرتے تھے۔

ایسے افراد میں زیادہ تر کا تعلق محلوں میں شادی بیاہ کے موقع پر ڈھول بجانے والوں سے ہوا کرتا تھا۔ اب روایتی موسیقی دم توڑتی جا رہی ہے اور یہ لوگ بھی کمیاب ہوتے جا رہے ہیں۔ سحری کے وقت جب یہ گلی محلوں سے گزرا کرتے تھے تو خواتین اور بچے خاص طور پر انہیں دیکھنے کے لیے کھڑکیوں اور دروازوں پر کھڑے ہو جاتے تھے۔

(جاری ہے)

یہ ڈھولچی رمضان کے بعد عید کے موقع پر اپنے علاقے کے گھروں پر جا کر مالی مدد کے طور پر عیدی کی صورت میں رقوم وصول کیا کرتے تھے۔

حالیہ کچھ عرصے سے سحری کے وقت لوگوں کو روزے کے لیے اٹھانے والے صدیوں پرانی روایت کے حامل ایسے ڈھولچیوں کی تعداد میں واضح کمی دیکھی گئی ہے۔ اب گلیوں اور محلوں میں ڈھول کی تھاپ کے ساتھ ”اٹھ جاﺅ لوگو، سحری کھا کر روزہ رکھ لو“ کی صدا کم ہی سننے میں ملتی ہے۔ایسے ہی ڈھولچیوں میں راولپنڈی کا لال حسین بھی ہے، وہ ہر رمضان کے مہینے میں آدھی رات کے بعد ایک بجے اپنے ڈھول پر لوگوں کو اٹھانے کا سلسلہ شروع کیا کرتا تھا۔

وہ گزشتہ35 برسوں سے یہ فعل ایک نیکی سمجھ کر کرتا رہا۔خالی اور ویران گلیوں میں کئی کلومیٹر وہ اپنے ڈھول کو بجاتے ہوئے لوگوں کی توجہ روزہ رکھنے کی جانب مبذول کرایا کرتا تھا۔یہ امر اہم ہے کہ سبھی ڈھولچی سحری کے وقت ڈھول پر بھنگڑے کی تھاپ کا استعمال کیا کرتے تھے۔ پاکستان کے سماجی ماہرین کا خیال ہے کہ اسمارٹ فون جنریشن ایسی قدیمی روایات کے اتنے گرویدہ نہیں رہے اور نصف شب کو بستر میں دراز ہوتے وقت وہ ڈھول کی تھاپ کو نیند میں خلل بھی محسوس کرتے ہیں۔

ایسے ہی عوامل سے اس قدیمی روایت پر جدیدیت کی دھول جمنا شروع ہو گئی ہے۔ پاکستان کے ثقافت کے قومی ادارے کے سابق سربراہ عکسی مفتی کا خیال ہے کہ ایسی روایات کو زندہ رکھنے کے لیے ماوں کو اپنے تربیتی عمل میں پرانے معاشرتی طریقوں کو متعارف کرانے کے لیے اختراعات کی ضررورت ہے۔عکسی مفتی کے مطابق ڈھولچیوں کی تعداد کم نہیں بلکہ وہ ناپید ہونے لگے ہیں۔ راولپنڈی شہرکے لال حسین کا بھی خیال ہے کہ ہر سال سحری میں ڈھولچی کم ہو رہے ہیں کیونکہ ان کی پذیرائی کا سلسلہ بھی ختم ہوتا جا رہا ہے۔

متعلقہ عنوان :