سکھر، شہر کے مختلف علاقوں میں پینے کے پانی کے بحران اور بجلی کی لوڈشیڈنگ پر اظہار تشویش

پیر جون 23:40

سکھر۔ 4جون(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 04 جون2018ء) ملک فلاحی جماعت سکھر کے بانی ملک محمد رضوان الحق نے شہر کے مختلف علاقوں میں پینے کے پانی کے بحران اور بجلی کی لوڈشیڈنگ پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ میونسپل کارپوریشن واٹر سپلائی کی نااہلی کے باعث نیو پنڈ ، نواں گوٹھ ، پرانا سکھر سمیت شہر کے مختلف علاقوں جاری آبی بحران کے باعث عوام رمضان المبارک کے مہینے میں بھی پانی کو ترس رہے ہیںمتاثرہ علاقوں کی مساجد وں میں وضو تک کا پانی دستیاب نہیں ہے متاثرہ علاقوں کے عوام بچے اور بڑے دور دراز کے علاقوں میں نصب ہینڈ پمپس ، فلٹر پلانٹس سے پانی بھر کرکے پانی روز مرہ کی ضروریات پوری کرنے پر مجبور ہو چکے ہیں متاثرہ علاقوں میں پانی کی فراہمی کیلئے میونسپل انتظامیہ کی جانب سے کوئی متبادل انتظامات نظر نہیں آرہے ہیں شدید گرمی کے موسم میں پانی کی قلت اور بجلی کی گھنٹوں لوڈشیڈنگ نے عوام کا جینا دو بھر کردیا ہے پانی کی قلت ، بجلی کی لوڈشیڈنگ نے خاص طور پر روز ہ داروں کی مشکلات میں دوگنا اضافہ کردیا ہے ملک محمد رضوان الحق نے کہا کہ سکھر الیکٹرک پاور سپلائی ( سیپکو ) انتظامیہ نے رمضان المبارک میں سحر و افطار اور نماز تروایح کے دوران لوڈشیڈنگ نہ کرنے کا اعلان کیا تھا مگر اسکے باوجود شہر کے مختلف علاقوں میں سحر، افطار اور نماز تروایح کے دوران بھی لوڈشیڈنگ کی جارہی ہے ملک محمد رضوان الحق نے سیپکو چیف اور میئر سکھر ارسلان اسلام شیخ سے مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ رمضان المبارک میں شہر کے مختلف علاقوں میں بجلی کی لوڈشیڈنگ اور پینے کے پانی کی قلت کا نوٹس لیکر عوام کو ان مسائل سے نجات دلائی جائے ۔