محکمہ پولیس سندھ میں ڈرائیورکی بھرتی کے درجنوں امیدواروں کا ٹنڈوالہ یار پریس کلب کے سامنے مظاہرہ

بدھ جون 21:54

ٹنڈوالہ یار (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 06 جون2018ء) محکمہ پولیس سندھ کی جانب سے بحیثیت ڈرائیورکی بھرتی کے درجنوں امیدواروں کا ٹنڈوالہ یار پریس کلب کے سامنے سرور حسین مشوری ، طارق شاہ ،یاسر مظہر کی قیادت میں احتجاجی مظاہرہ کیا گیا مظاہرین نے ہاتھوں میں بینرز اور پلے کارڈ اٹھارکھے تھے جن پر ڈرائیور کے کینسل کردہ آرڈروں کو بحال کرنے کے نعرے درج تھے اس موقع پر مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے مقررین نے کہا کہ سجاول ٹنڈومحمد خان اور حیدرآباد کی سزا ٹنڈوالہ یار ضلع کہ 143اہل امیدواروں کو کیوں دی جارہی ہے جبکہ امیدواروں نے حکومتی پالیسی کے تحت تمام ٹیسٹ جن میں دوڑ ، فزیکل ، اور انٹرویوز اپنی صلاحیت سے پاس کرلئے تھے پولیس کی جانب سے ان پاس کردا امیدواروں کی فائنل لسٹ بھی ایس ایس پی آفس میں آویزاں کردی گئی تھی اور امیدواروں کو کہا گیا تھا کہ ایک ہفتے کے اندر اندر تمام امیدواروں کو آفر لیٹر ز جاری کردیئے جائیں گے لیکن اچانک محکمہ پولیس کی جانب سے ایک لیٹر کے ذریعے حکم نامہ جاری کیا گیا کہ سجاول ٹنڈومحمد خان اور حیدرآبادکہ امیدواروں کے کاغذات نامکمل ہونے کی وجہ کو جواز بناتے ہوئے تمام اضلاع کہ امیدواروں کے آرڈرز کینسل کردیئے گئے مقررین نے کہا کہ ہم نے محکمے کی پالیسی کے مطابق اپنی اہلیت سے فٹنیس ، دوڑ ، تحریری ٹیسٹ ، سمیت وائیوا پاس کئے تھے اور فائنل لسٹ کہ وقت ہم کو کہا جارہا ہے کہ اس میں دھاندھلیاں ہوئی ہیں اس لئے اس کو کینسل کیا جارہا ہے ہم کہتے ہیں کہ اس میں کوئی دھاندھلی نہیں ہوئی ہے چھوٹی چھوٹی وجوہات بتاکر ہمیں نااہل قرار دیا جارہا ہے ہم اس کو مکمل طور پر نامنظور کرتے ہیں اور ہم کہتے ہیں کہ ہم نہ نااہل تھے اور نہ نااہل ہیں ہم سے ٹیسٹ لینے والے تو نااہل ہوسکتے ہیں لہذہ ایسے نااہل افسران کو فوری طور پر نوکریوں سے برطرف کیا جائے امیدواروں نے میڈیا سے گفتگو میں کہا کہ ہم آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ سے اپیل کرتے ہیں کہ ہمارے ساتھ فوری طور پر انصاف کیا جائے اور میرٹ کی دہجیاں نا اڑائی جائے اور ضلع ٹنڈوالہ یار کہ اہلیت پر پاس ہونے والے 143امیدواروں کی آس کو برقرار رکھتے ہوئے انہیں آفر لیٹر جاری کیا جائے

متعلقہ عنوان :