بجلی ،پانی کی بندش ‘جنگلات میں آگ ‘ٹوٹی سڑکوں سمیت کوٹلی کے مسائل

کوٹلی کے سینکڑوں نوجوانوں کاڈاکٹر سید شمس محی الدین کی قیادت میں احتجاجی مظاہرہ

جمعرات جون 16:12

کوٹلی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 07 جون2018ء) بجلی ،،پانی کی بندش ‘جنگلات میں آگ ‘ٹوٹی سڑکوں سمیت کوٹلی کے مسائل ۔کوٹلی کے سینکڑوں نوجوانوں کاڈاکٹر سید شمس محی الدین کی قیادت میں احتجاجی مظاہرہ ،،شہید چوک میں جلسہ۔۔۔جلسہ کے احتتام پر ڈی سی آفس تک مارچ ۔ حکومت ، سیاسی قیادت اور ڈپٹی کمشنر کوٹلی پر سخت تنقید ، تفصیلات کے مطابق کوٹلی کے نوجوان سیاسی و سماجی کارکن ڈاکٹر سید شمس محی الدین کی کال پر بدھ اور جمعرات کی درمیانی شب کوٹلی کے سینکڑو ں افراد بلا تخصیض پارٹی و برادری شہید چوک میں جمع ہوگئے ۔

جہاں احتجاجی جلسہ کیا گیا ۔ جلسہ میں نون لیگ۔پی پی پی۔پی ٹی آئی ،،جماعت اسلامی ،قوم پرست تنظیموں ،سمیت انجمن تاجران کے نمائندوں ،تنظیم سیو کوٹلی،تنظیم ابرک کے راہنمائوں نے بھی شرکت کی۔

(جاری ہے)

اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے ۔سرجن ڈاکٹر شمس محی الدین نے کہا کہ کوٹلی مسائل کا گڑھ بن چکا ہے اور ہماری نااہل سیاسی قیادت مسائل حل کرنے میں ناکام ہے ۔

کوٹلی انتظامیہ نا اہل ہے ۔ ڈپٹی کمشنر کو عوامی مسائل سے کوئی سروکار نہیں ۔ انھوں نے مطالبہ کیا کہ کوٹلی سے لووڈ شیڈنگ مکمل ختم کی جائے منگلا ڈیم ، گلپور پاور پراجیکٹ اور ہولاڑ کروٹ پاور پراجیکٹ سے پہلے مقامی ضرورت پوری کی جائے ۔ کوٹلی میں وولٹیج کی کمی الگ مسئلہ ہے ۔جہاں نئے ٹرانسفارمرز اور کنڈکٹر ز کی ضرورت ہے وہ لگائیں جائیں تاکہ وولٹیج 220 پوری ہو سکے ۔

کوٹلی میں صاف پانی کی فراہمی یقینی بنائی جائے ۔ گریٹر واٹر سپلائی سکیم کو جلد از جلد مکمل کیا جائے ۔ فلٹریشن پلانٹ اور واٹر ٹینک کا منصوبہ جلد از جلد مکمل کر کے شہریوں کو پانی فراہم کیاجائے ۔ گریٹر واٹر پر جاری کام کو تیز رفتار کیا جائے ۔جنگلات جلائے جانے کے واقعات کا نوٹس لیکر محکمہ جنگلات کے آفیسران کو معطل کرکے انکوائیری کی جائے اور ذمہ داران کو سزا دی جائے ۔

ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال کوٹلی کو اپ گریڈ کیا جائے ۔ ہسپتال کے اندر مزید شعبہ جات قائم کئے جائیں ۔ ڈاکٹرز اور عملے میں اضافہ کیا جائے ۔ کوٹلی میں سیورج سسٹم بحال کیا جائے ۔ جہاں ضرورت ہو وہاں نئے نالے بنائے جائیں ۔ بند مین ہولز اور بند نالے کھولے جائیں ۔ کوٹلی کے تمام محکمہ جات کی کارکردگی کا جائیز ہ لیکرآفیسران اور ملازمین کو پابند کیا جائے کہ وہ نظام کی درستگی کے لئے اپنا اپنا کردار ادا کریں ۔

تنخواہوں کو حلال کر کے کھائیں ۔ کوٹلی کے تمام آفیسر ز کو دفتری اوقات کار کا پابند بنایا جائے ۔ خود ڈپٹی کمشنر دفتر میں موجود نہیں ہوتے آفیسران کو حاضری کا پابند کون کرے گا ۔ ہم عوامی مسائل کے حل کے لئے سڑکوں پر نکل آئے ہیں اورمسائل کے حل تک چین سے نہیں بیٹھیں گے ۔ حکومت جملہ مسائل کے حل کے لئے اقدامات کرے ۔ احتجاجی جلسہ سے شہباز علی حیدری، پروفیسر عبدلحلیم بٹ ، شاہنواز ملک ایڈوکیٹ اور دیگر نے خطاب کیا ۔ احتجاجی جلسہ کے بعد شرکاء نے شمس محی الدین کی قیادت میں ڈی سی آفس کی جانب مارچ کیا ۔ وہاں ایس ڈی ایم کوٹلی ، ایس ایچ او اور دیگر آفیسران موجود تھے ، جنھوں نے مظاہرین کو سماعت کیا اور مطالبات پر مشتمل فائل وصول کی ۔