آئین میں ترمیم اپوزیشن جماعتوں کو اعتماد میں لئے بغیر کی گئی ‘اپوزیشن جماعتوں کو تحفظات ہیں‘چند روز تک اپنالائحہ عمل دینگے

رکن قانون ساز اسمبلی و مسلم کانفرنس کے مرکزی رہنما ملک محمد نواز خان کی بات چیت

جمعرات جون 16:12

کوٹلی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 07 جون2018ء) قانون ساز اسمبلی آزاد کشمیر کے سینئر ترین رکن ، سابق سینئر وزیر و مسلم کانفرنس کے مرکزی رہنما ملک محمد نواز خان کہا ہے کہ آئین میں ترمیم اپوزیشن جماعتوں کو اعتماد میں لئے بغیر کی گئی جس پر اپوزیشن جماعتوں کو تحفظات ہیں ۔ آئندہ چند روز تک اپنالائحہ عمل دیں گے ۔ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انھوںنے کہا کہ ایکٹ 74 میں ترمیم کے لئے پیپلز پارٹی کے دور حکومت میں آئینی کمیٹی بنی تھی ۔

(جاری ہے)

اس کمیٹی میں پیپلز پارٹی کی طرف سے مطلوب انقلابی ، مسلم کانفرنس کی طرف سے میں (ملک نواز ) اور سیاب خالد ،پی ٹی آئی کی طرف سے چوہدری محبوب ایڈوکیٹ شامل تھے ۔ اس آئینی کمیٹی نے اپنی اپنی جماعتوں کی مشاورت سے آئینی ترمیم کے لئے تجاویز تیار کرنی تھیں ۔ اس کے لئے بار کونسل آزاد کشمیر اور تمام اضلاع کی ڈسٹرکٹ بار ایسوسی ایشنز سے تجاویز بھی لی گئی تھیں ۔ مگر ن لیگ کی موجودہ حکومت نے اپوزیشن جماعتوں اور آئینی کمیٹی کو اعتماد میں لئے بغیر ازخود آئینی ترمیم تیار کی اور خود ہی منظور کر ڈالی۔ اس ترمیم پر اپوزیشن جماعتوں کو تحفظات ہیں ۔ اپوزیشن جماعتوں کی جانب سے آئندہ چند روز میں احتجاجی لائحہ عمل دیں گے ۔