نگراں وفاقی کابینہ کا پہلا اجلاس: معاشی، داخلی صورتحال پر تبادلہ

جمعرات جون 23:02

اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 07 جون2018ء) نومنتخب نگراں وفاقی کابینہ کا پہلا اجلاس نگراں وزیراعظم جسٹس(ر) ناصرالمک کی سربراہی میں وزیر اعظم ہاؤس میں منعقد ہوا۔اجلاس میں وفاقی کابینہ کو محکمہ داخلہ اور خزانہ کی جانب سے ملک کی داخلی صورتحال اور معیشت کے حالات سے آگاہ کیا گیا،اس ضمن میں سیکریٹری داخلہ ارشد مرزا نے کابینہ کو ملک کی داخلی سیکیورٹی اور امنِ عامہ کے بارے میں بریفنگ دی جبکہ وفاقی وزیر خزانہ شمشاد اختر نے معیشت کی موجودہ صورتحال اور معاشی امکانات سے تفصیل سے آگاہ کیا۔

جمعرات کو نگراں وفاقی کابینہ کا پہلا اجلاس نگراں وزیراعظم جسٹس(ر) ناصرالمک کی سربراہی میں وزیر اعظم ہاؤس میں منعقد ہوا۔اجلاس میں وفاقی کابینہ کو محکمہ داخلہ اور خزانہ کی جانب سے ملک کی داخلی صورتحال اور معیشت کے حالات سے آگاہ کیا گیا،اس ضمن میں سیکریٹری داخلہ ارشد مرزا نے کابینہ کو ملک کی داخلی سیکیورٹی اور امنِ عامہ کے بارے میں بریفنگ دی جبکہ وفاقی وزیر خزانہ شمشاد اختر نے معیشت کی موجودہ صورتحال اور معاشی امکانات سے تفصیل سے آگاہ کیا۔

(جاری ہے)

اجلاس میں سیکریٹری داخلہ نے کابینہ کو بتایا کہ وزارتِ داخلہ کی جانب سے آئندہ انتخابات کے پیشِ نظر الیکش کمیشن اور صوبائی حکومتوں کو اس طرح معاونت فراہم کی جارہی ہے جس سے 25 جولائی کو متوقع انتخابات کے شفاف اور آزادانہ انعقاد کو یقینی بنایا جاسکے۔اس حوالے سے سیکریٹری داخلہ نے وزارت داخلہ کے انتظام و انصرام اور اس سے منسلک شعبہ جات کے بارے میں تفصیل سے آگاہ کیا۔

علاوہ ازیں نگراں وزیراعظم اور ان کی ٹیم کو قانونی اور انتظامی پالیسیوں، ملک میں سیکیورٹی اور امنِ عامہ کی صورتحال بہتر بنانے کے لیے اٹھائے جانے والے اقدامات سے بھی آگاہ کیا گیا۔دوسری جانب وفاقی وزیرِ خزانہ شمشاد اختر نے وفاقی کابینہ کو ملکی معیشت کے حوالے سے ایک جامع پریزنٹیشن دی۔مذکورہ پریزنٹیشن میں انہوں نے بتایا کہ ملکی مجموعی پیداوار کی شرح نمو 6 فیصد ہونا غیر تسلی بخش ہے،اس پر وفاقی کابینہ کی جانب سے اس بات پر زور دیا گیا کہ نگراں حکومت کی مدت کے دوران ملک کو درپیش معاشی مسائل حل کے لیے اقدامات اٹھائے جائیں، تاکہ ملک میں ادائیگیوں کا توازن، معاشی خسارہ، قرض کے معاملات اور پبلک سیکٹر کے کاروبار کو بہتر انداز میں منظم کیا جا سکے۔

اس موقع پر نگراں وزیراعظم نے وزارتِ خزانہ کو ہدایت کی کہ معاشی مسائل کے حل کے لیے ایک جامع حکمتِ عملی ترتیب دی جائے اور اس کے تحت فوری اقدامات اٹھائے جائیں، جبکہ طویل بنیادوں پر اصلاحات کا خاکہ ترتیب دیا جائے جس پر آئندہ آنے والی حکومت کام کرسکے۔اس کے علاوہ نگراں وزیرِاعظم کو ملک میں توانائی کی صورتحال پر وزارت توانائی کی جانب سے بھی بریفنگ دی گئی، وزیراعظم نے متعلقہ حکام کو توانائی کے شعبے میں ہونے والے نقصانات سے بچنے کے لیے اقدامات کرنے کے بھی احکامات دیے۔