شنگھائی تعاون تنظیم کا سربراہ اجلاس کل ہوگا

جمعہ جون 13:19

شنگھائی تعاون تنظیم کا سربراہ اجلاس کل ہوگا
شنگھائی ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 08 جون2018ء) شنگھائی تعاون تنظیم کا 2 روزہ اجلاس کل ہفتہ سے چنگ ڈائو شہر میں شروع ہو گا۔ چائنہ ریڈیو انٹرنیشنل کے مطابق اس تنظیم کے رکن ملکوں میں چین،،،روس قزاخستان، ازبکستان، کرغیزستان، تاجکستان، پاکستان اور بھارت ہیں۔ پاکستان اور بھارت کو 2017ء میں اس تنظیم کا باقاعدہ رکن بنایا گیا تھا۔ اس تنظیم کی بنیاد تقریباً سترہ برس قبل 2001ء میں رکھی گئی تھی۔

اس کے بنیادی مقاصد میں انسداد دہشت گردی، سرحدی تنازعات کا حل اور علاقائی اقتصادی صورت حال کو بہتر بنانا شامل ہے۔ چنگ تائو شہر کانفرنس کی میزبانی کے لئے مکمل طور پر تیار ہے۔رواں سال جنوری سے چنگ تائو شہر کے تعلیمی اداروں سے رضاکاروں کی بھرتی شروع ہوئی اوراس وقت شہر میں ہر جگہ رضاکاروں سے مدد حاصل کی سکتی ہے۔

(جاری ہے)

اس کے علاوہ اس کانفرنس کی کوریج کرنے کے لیے چنگ تاوٴْ آنے والے چینی و غیرملکی صحافیوں کی تعداد دو ہزار سے زائد ہے اورصحافیوں کے لیے نیوز سینٹر فعال ہے۔

چنگ تائو کی معاشی ، سماجی اور ثقافتی معلومات حاصل کرنے کے لیے ان صحافیوں کے لیے خصوصی سرگرمیوں کا بھی اہتمام کیا جا رہا ہے۔ نیوز سینٹر میں صحافیوں کی خدمات کے لیے ربوٹس کا بھی استعمال ہوتا ہے جو پانی جوس اور کافی فراہم کر سکتے ہیں اور سکیورٹی کا تحفظ اور کچھ سوالات کے جوابات بھی دے سکتے ہیں۔سفارتیعہدیداروں کا کہنا ہے کہ گزشتہ سال بھارت اور پاکسستان کی شمولیت سے ایس سی او کو نئی قوت ملی ہے اور تنظیم کے بین الاقوامی اثر رسوخ میں بھی اضافہ ہو گا۔

سفارتکاروں کے مطابق دونوں ممالک کی شمولیت نے تنظیم کی ترقی کے لیے مثبت عوامل بھی فراہم کئے ہیں۔۔چین میں مقیم پاکستان کے سفیر مسعود خالد نے ایس سی او کی ترقی کے لئے پٴْر امیدی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان ایک نئے رکنکی حیثیت سے چنگ تاوکانفرنس میں شرکت کر رہا ہے اور امید ہے کہ اس کانفرنس میں تنظیم کی ترقی کے لیے سمت کا مزید بہتر تعین کیا جائے گا۔