آسٹریا کی حکومت کا سات مساجد کو بند اور درجنوں آئمہ کرام کو ملک بدر کرنے کا فیصلہ

جمعہ جون 21:50

ویانا(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 08 جون2018ء) آسٹریا کی حکومت نے سات مساجد کو بند اور درجنوں آئمہ کرام کو ملک بدر کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔آسٹریا کی چانسلرسیباستان کرٴْس نے کہا کہ حکومت ویانا میں ان 7 مساجد کو بند کررہی جہاں غیرملکی مالی معاونت سے ’سیاسی اسلام‘ کی ترویج کی جارہی ہے جب کہ حکومت نے عرب مذہبی گروپ کو بھی تحلیل کرنے کافیصلہ کیا ہے جو کہ ان مساجد کی نگرانی کرتا ہے۔

(جاری ہے)

حکومت نے درجنوں آئمہ کرام کے خلاف کریک ڈاؤن کرتے ہوئے انہیں ملک بدر کرنے کا بھی فیصلہ کیا ہے۔قدامت پسند سیباستان گزشتہ سال دسمبر میں مہاجرین کے خلاف سخت گیر موقف رکھنے والی جماعت سے اتحاد کی صورت میں چانسلر منتخب ہوئی تھیں۔دوسری جانب ترکی نے آسٹریا کی حکومت کے مذکورہ اقدامات کو اسلام فوبیا قرار دیتے ہوئے کہا کہ ویانا حکومت مسلمانوں کے خلاف امتیازی سلوک کررہی ہے۔

متعلقہ عنوان :