چینی ہیکرز نے امریکی بحریہ کی متعدد حساس معلومات ہیک کرلیں

ایف بی آئی معاملے کی تحقیقات کر رہی ہے،ہیکروں نے امریکی بحریہ کے آبدوزوں اور زیر سمندر استعمال ہونے والے اسلحے کو نشانہ بنایا اور اہم معلومات چوری کیں،نیوی کی درخواست پر میزائل پروجیکٹ سے متعلق معلومات شائع نہیں کی گئیں،پینٹاگون

ہفتہ جون 15:09

واشنگٹن (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 09 جون2018ء) چینی ہیکرز نے امریکی بحریہ کے کنٹریکٹر کا انتہائی حساس ڈیٹا چوری کرلیا،جس میں زیرسمندر جنگی حرب سے متعلق معلومات بھی شامل ہیں۔ہفتہ کو انسپکٹر جنرل آفس آف پینٹاگون کی جانب سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا کہ ایف بی آئی چین کے ہیکرز کی جانب سے امریکی بحریہ کے کنٹریکٹر کا انتہائی حساس ڈیٹا چوری کیے جانے کے معاملے کی تحقیقات کر رہی ہے،چینی ہیکروں نے امریکی بحریہ کے آبدوزوں اور زیر سمندر استعمال ہونے والے اسلحے پر ریسرچ کرنے والے کنٹریکٹرز کو نشانہ بنایا اور کئی اہم معلومات چوری کرلیں،جس میں 2020 تک آبدوزوں میں سپر سونک اینٹی میزائل کی تنصیب سے متعلق منصوبے کی معلومات بھی شامل ہیں اور اس منصوبے کو 'سی ڈریگن' کا نام دیا گیا تھا۔

(جاری ہے)

رپورٹ کے مطابق ہیکرز نے سی ڈریگن منصوبے کی 614 گیگا بائٹ معلومات ہیک کیں،جس میں سگنل اور سینسر ڈیٹا،سب میرن ریڈیو روم کی معلومات اور الیکٹرانک وار فیئر لائبریری کی معلومات بھی شامل ہیں،نیوی کی درخواست پر میزائل پروجیکٹ سے متعلق حساس معلومات شائع نہیں کی گئیں،کیونکہ ایسی معلومات شائع کرنے ملکی سالمیت کے لیے خطرے کا باعث ہوسکتی ہے۔

حکام کے مطابق نیوی نے ایف بی آئی کی مدد سے تحقیقات شروع کردیں ہیں،تاہم ایف بی آئی نے اس پر تبصرہ کرنے سے گریز کیا ہے۔دوسری جانب انسپکٹر جنرل آفس آف پینٹاگون کی جانب سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا کہ وزیر دفاع جم میٹس حساس معلومات چوری ہونے سے متعلق خبر سامنے آنے کے بعد نیوی کنٹریکٹر کی سائبر سیکیورٹی پر نظرثانی کی ہدایات کی ہیں۔