سپریم کورٹ نے موبائل کارڈز پر وصول کیے جانیوالے ٹیکسز معطل کردیئے،

احکامات پر عمل کیلئے دو دن کی مہلت ریڑھی والا موبائل صارف ٹیکس نیٹ میں کیسے آگیا ، ٹیکس دہندہ اور نادہندہ کے درمیان فرق واضح نہ کرنا امتیازی سلوک ہے، آئین کے تحت امتیازی پالیسی کو کالعدم قرار دیا جاسکتا ہے،چیف جسٹس کے ریمارکس

پیر جون 13:08

سپریم کورٹ نے موبائل کارڈز پر وصول کیے جانیوالے ٹیکسز معطل کردیئے،
لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 11 جون2018ء) چیف جسٹس پاکستان نے موبائل کمپنیز اور ایف بی آر کی جانب سے موبائل کارڈز پر وصول کیے جانیوالے ٹیکسز معطل کر تے ہوئے احکامات پر عمل کرنے کے لیے دو دن کی مہلت دیدی، چیف جسٹس نے ریمارکس د یئے کہ آج کل تو ریڑھی والا بھی موبائل فون استعمال کرتا ہے، وہ ٹیکس نیٹ میں کیسے آگیا، ٹیکس دہندہ اور نادہندہ کے درمیان فرق واضح نہ کرنا امتیازی سلوک ہے، آئین کے تحت امتیازی پالیسی کو کالعدم قرار دیا جاسکتا ہے۔

پیر کو چیف جسٹس پاکستان جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں موبائل فون کارڈز پر ٹیکس کٹوتی کے خلاف از خود نوٹس کیس کی سماعت کی۔۔سپریم کورٹ نے ٹیکسوں کو معطل کرنے کے احکامات پر عمل کرنے کے لیے دو دن کی مہلت دیدی۔

(جاری ہے)

سپریم کورٹ میں موبائل کارڈز پرٹیکس کٹوتی کیس میں چیف جسٹس نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ آج کل تو ریڑھی والا بھی موبائل فون استعمال کرتا ہے وہ ٹیکس نیٹ میں کیسے آگیا۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ ٹیکس دہندہ اور نادہندہ کے درمیان فرق واضح نہ کرنا امتیازی سلوک ہے اور آئین کے تحت امتیازی پالیسی کو کالعدم قرار دیا جاسکتا ہے۔کیس کی سماعت کے موقع پر چیئرمین ایف بی آر بھی عدالت میں پیش ہوئے ۔ اس موقع پر جسٹس اعجاز الاحسن نے سوال کیا کہ جو شخص ٹیکس نیٹ میں نہیں آتا اس سے ٹیکس کیسے وصول کیاجا سکتا ہی جس پر چیئرمین ایف بی آر نے بتایا کہ موبائل کالز پر سروسز چارجز کی کٹوتی کمپنیز کا ذاتی عمل ہے۔

چیئرمین ایف بی آر نے بتایا کہ 130ملین افراد موبائل استعمال کرتے ہیں جبکہ ملک بھر میں ٹیکس دینے والے افراد کی مجموعی تعداد 5 فیصد ہے۔اس پر چیف جسٹس ثاقب نثار نے استفسار کیا کہ 5 فیصد لوگوں سے ٹیکس لینے کے لیے 130ملین پر موبائل ٹیکس کیسے لاگو ہوسکتا ہی اس موقع پر عدالت نے کیس کی مزید کارروائی عدالتی وقفہ کے باعث ملتوی کر دی۔