جعفرآباد، ایک ماہ قبل اغوا ہونیوالی لڑکی کی عدم بازیابی پرپولیس کیخلاف ورثا کا قرآن پاک اٹھا کر احتجاجی مظاہرہ

منگل جون 18:44

جعفرآباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 12 جون2018ء) جعفرآبادایک ماہ قبل اغوا ہونیوالی لڑکی کی عدم بازیابی اور پولیس کے ناروا رویے کیخلاف ورثا کا ڈیرہ اللہ یار میںقرآن پاک اٹھا کر احتجاجی مظاہرہ،لڑکی کی بازیابی کا مطالبہ کیاہے ۔ جعفرآباد کے صدر مقام شہر ڈیرہ اللہ یار میں انصاف کے حصول کیلئے پلال برادری کے خواتین مرد بچے سڑکوں پر آگئے ،ایک ماہ قبل ڈیرہ اللہ یار سے اغوا ہونے والی 25سالہ شاہداں بی بی کی عدم بازیابی اور پولیس سے انصاف ناملنے پرورثہ نے قرآن پاک اٹھا کر ڈیرہ اللہ یار میں احتجاجی مظاہراہ کیا،مظاہرین نے اغوا ہونے والی لڑکی اور ملزم کی تصویر اٹھا کر پولیس کے خلاف شدید نعرے بازی کی۔

(جاری ہے)

اس موقع پر میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے مغوی لڑکی کے والد خیر جان پلال نے کہا کہ ایک ماہ قبل ملزم پرویز احمد نے اپنے دیگر تین ساتھیوں سے مل کرہماری لڑکی کو اغوا کیا ہے جن پر ہم پولیس تھانہ ڈیرہ اللہ یار ایس ایچ او کے پاس مقدمہ درج کروانے گئے تو پولیس نے اپنی مرضی کے مطابق ایف آئی آر درج کیا ہم ان پڑھ لوگ ہیں ،مظاہرین سے زاہداں بی بی نے کہا کہ پولیس نے ہماری کوئی مدد نہیں کی ا،،پولیس نے ہمارے مخالفین سے رشوت لیکرہمارے کیس کو کمزور کرکے لکھا جس کی وجہ سے ملزمان ضمانت پر رہا ہوکر ہمیں فون پر دھمکیاں دے رہے ہیں ،انہوں نے عدلیہ سے انصاف کی اپیل کی ہے ورثاء نے چیف جسٹس سمیت عالی حکام سے مطالبہ کیا کہ ڈیرہ اللہ یار پولیس کے خلاف نوٹس لیکر ہمیں انصاف فراہم کیا جائے بصورت دیگر ہم خودسوزی کرنے پر مجبور ہونگے۔