ڈالر کی قیمت میں مسلسل اضافہ سے خام مال مہنگا ،صنعتی شعبہ متاثر ہوگا‘شہباز اسلم

بدھ جون 13:18

ڈالر کی قیمت میں مسلسل اضافہ سے خام مال مہنگا ،صنعتی شعبہ متاثر ہوگا‘شہباز ..
لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 13 جون2018ء) تاجر رہنما و ممبر لاہور چیمبرز آف کامرس وانڈسٹری سابق وائس چیئرمین فرایا شہباز اسلم نے روپے کی بے قدری اور ڈالر کی قیمت 122.50 روپے کی بلند ترین سطح پر پہنچنے پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ ڈالر کی قیمت میں مسلسل اضافہ سے بیرون ملک سے منگوایا گیا صنعتی شعبہ میں استعمال ہونے والا خام مال مہنگاہونے سے صنعتی شعبہ متاثر ہوگا اور صنعتی شعبہ پر اضافی مالی بوجھ بڑھے گا ،روپے کی قدر میں کمی اور ڈالر مہنگا ہونے سے حکومتی قرضوں کے حجم میں مزید اضافہ ہوگا جس سے ملکی معیشت متاثر ہوگی اور ان قرضوں کی ادائیگی کیلئے ملک کے اندر ٹیکسوں کے بوجھ میں اضافہ سے ہوشربا مہنگائی جنم لے گی۔

ان خیالات کا اظہار انہوںنے فائونڈ ر چیئرمین عدنان بٹ،ارشد بیگ،تنویر احمد،حقیق احمد،شاہد بیگ اور دیگر صنعتکاروں کے وفد سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

(جاری ہے)

شہباز اسلم نے کہا کہ مت ڈالر کی بے لگام پرواز کو لگام دے کیونکہ ڈالر کی قیمت بڑھنے سے خام مال مہنگا اور صنعتکار پریشانی کا شکار ہیں۔انہوںنے کہا کہ بیرون ممالک سے خام مال کی قیمت میں اضافہ پیداواری لاگت میں اضافہ اور مہنگی اشیاء کے باعث درآمدات میں کمی واقع ہوگی۔

انہوںنے کہا کہ روپیہ کی قدر میں کمی اور تونائی بحران کے باعث صنعتی پیداوار بری طرح متاثر ہورہی ہے اور پاکستان عالمی مارکیٹ سے تیزی سے باہر ہورہا ہے، ڈالر کی قیمت بڑھنے سے ملک پر بیرونی قرضوں میںبھی اضافہ ہورہا ہے اس لیے روپے کی قدر کو بہتر کو مستحکم کرنے کیلئے حکومت ٹھوس اقدامات کرے۔اور حکومت ڈالر کی قیمت کو کنٹرول کرے ۔