بیلٹ پیپر پر اضافی خانے کے لیے سندھ ہائیکورٹ میں آئینی درخواست دائر

الیکشن کمیشن، ایڈووکیٹ جنرل اور ڈپٹی اٹارنی جنرل کو 21 جون کے لیے نوٹس جاری،جواب طلب

بدھ جون 17:19

کراچی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 13 جون2018ء) کراچی کی ایک خاتون شہری کی جانب سے بیلٹ پیپر پر اضافی خانے کے لیے سندھ ہائیکورٹ میں آئینی درخواست دائر کر دی گئی ہے۔ سندھ ہائیکورٹ نے درخواست پر الیکشن کمیشن،، ایڈووکیٹ جنرل اور ڈپٹی اٹارنی جنرل کو 21 جون کے لیے نوٹس جاری کرتے ہوئے جواب طلب کر لیا ہے۔

(جاری ہے)

تفصیلات کے مطابق یہ آئینی درخواست ڈاکٹر نتاشامصطفی نے منظور کھوسو ایڈووکیٹ کے توسط سے دائر کی ہے جس میں امیدواروں کی فہرست کے آخر میں None of the Above کا اضافی خانہ شامل کرنے کی استدعا کی گئی ہی.

پٹیشنر ایڈووکیٹ سپریم کورٹ غلام مصطفی لاکھو مرحوم کی صاحبزادی ہیں. درخواست گزار نے وفاق پاکستان،، الیکشن کمیشن آف پاکستان اور صوبائی الیکشن کمیشن کو فریق بنایا ہی. درخواست گزار ڈاکٹرنتاشا نے مؤقف اختیار کیا ہے کہ اس خانے کے اضافے سے سیاسی شعور، اظہار رائے اور جمہوری نظام پر اعتماد بڑھے گا. درخواست کی سماعت بدھ کو جسٹس محمد علی مظہر اور جسٹس عمر سیال پر مشتمل بنچ نے کی.

عدالت نے الیکشن کمیشن،، ایڈووکیٹ جنرل اور ڈپٹی اٹارنی جنرل کو 21جون کے نوٹس جاری کرتے ہوئے جواب طلب کرلیاہی. سماعت کے موقع پر اپنے وکیل منظور کھوسو ایڈووکیٹ کے ہمراہ میڈیا سے گفت گو کرتے ہوئے ڈاکٹر نتاشا مصطفی نے کہا کہ اگر لوگ اپنے حلقے کے تمام امیدواروں کو ناپسند کرتے ہیں تو کیا وہ انتخابی عمل سے لاتعلق ہو کر گھر بیٹھ جائیں ایسے ووٹرز کو بھارت،، بنگلہ دیش،، یوکرین، کینیڈا سمیت دیگر ممالک کی طرح اپنی ناپسند کے اظہار کا موقع دیا جائے۔