بلوچستان میں انسدادپولیو مہم کو دھچکا،مزید کیس سامنے آگیا،بلوچستان کے ضلع دکی سے پولیو کا تیسرا کیس رپورٹ ہوگیا

جمعرات جون 18:07

کو ئٹہ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 14 جون2018ء) بلوچستان میں پولیو کی روک تھام کے حوالے سے کوششوں کو ایک اور دھچکا لگا ہے،صوبے سے پولیو کا ایک اور کیس رپورٹ ہوگیا،رواں سال صوبے سے پولیو کایہ تیسرا کیس رپورٹ ہوا ہے۔ نجی ٹی وی کے مطا بق بلوچستان میں انسدادپولیو کے حوالے سیکی جانیوالی کوششوں کو اس وقت ایک اور دھچکا لگا جب ضلع دکی سے پولیوکانیا کیس رپورٹ ہوا، پولیو کانیاکیس دکی کے علاقے کلی بابڑان یونین کونسل صدر سے ر پورٹ ہوا۔

محکمہ صحت کے ذرائع کے مطابق پولیوکاشکار محمدعثمان نامی 18ماہ کابچہ ہے،جس میں گذشتہ ہفتے پولیو وائرس کی تصدیق ہوئی،تشویشناک بات یہ ہے کہ رواں سال ضلع دکی سے رپورٹ ہونیوالا پولیو کا یہ تیسرا کیس ہے اوریہ اس وقت نہ صرف بلوچستان بلکہ پاکستان کابھی تیسرا پولیو کیس ہے۔

(جاری ہے)

محکمہ صحت کے ذرائع کیمطابق محمدعثمان کو انسدادپولیو کی گذشتہ چھ مہم کے دوران بچے کوصرف ایک بار پولیو سے بچائو کے قطرے پلائے جاسکے،پانچ بار مہم کیدوران بچہ گھرپردستیاب نہیں تھا،اس سے قبل دکی سے پو لیو کے دو کیسز رپورٹ ہو ئے تھے۔

دکی سے پہلاکیس رواں سال مارچ اور دوسرا کیس مئی میں رپورٹ ہواتھا، گذشتہ سال بھی بلوچستان سے پولیو کے تین کیسز رپورٹ ہوچکے ہیں۔اس سیقبل بلوچستان سے 2016 میںپولیو کے دوکیس جبکہ 2015میں رپورٹ ہونیوالے کیسز کی تعداد سات تھی۔ 2014 میں بلوچستان سے پولیوکی25کیسزرپورٹ ہوئے تھے۔تاہم 2013میں بلوچستان سے پولیو کاکوئی کیس رپورٹ نہیں ہوا تھا،تاہم 2012میں بلوچستان سے چار اور 2011میں صوبے سیرکارڈ 73کیسز رپورٹ ہوئے تھے۔اس لحاظ سے گذشتہ آٹھ سال کیدوران بلوچستان سے مجموعی طور پر 117کیسز رپورٹ ہوئے،

متعلقہ عنوان :