کوہاٹ میں عید الفطر کے موقع پر سخت حفاظتی انتظامات ،ہوائی فائرنگ کی روک تھام کیلئے ریڈ الرٹ جاری

جمعرات جون 20:07

پشاور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 14 جون2018ء) ضلعی پولیس سربراہ عباس مجید خان مروت نے کہا کہ کوہاٹ میں عید الفطر کے موقع پر سخت حفاظتی انتظامات کردئیے گئے ہیں جبکہ چاند رات پر ہوائی فائرنگ کی روک تھام کیلئے ریڈ الرٹ سیکیورٹی کے احکامات جاری کرتے ہوئے نگرانی کا عمل مزیر تیز کردیا گیا ہے،لائسنس یافتہ اسلحہ کی نمائش اور آتش بازی کے سامان پر بھی پابندی عائد کرتے ہوئے شہر میں اسلحے کی تمام دکانیں سیل کردی گئی ہیںاور موٹر سائیکل کی ون ویلنگ کے مرتکب افراد کے خلاف بھی سخت قانونی کاروائی عمل میں لانے کے احکامات جاری کردئیے گئے ہیں۔

نماز عید کیلئے خصوصی حفاظتی انتظامات مکمل کرلئے گئے ہیں جبکہ سیکیورٹی کے لحاظ سے حساس قرار دئیے گئے مقامات پر پولیس کی اضافی نفری بھی تعینات کردی گئی ہے اورچاند رات پر ہوائی فائرنگ روکنے کی خاطرپولیس حکام کو قانون شکن عناصر کے خلاف بھر پور قانونی طاقت استعمال کرنے کا حکم دیدیا گیا ہے ۔

(جاری ہے)

اس سلسلے میں ضلعی پولیس سربراہ عباس مجید خان مروت کی زیر صدارت سیکیورٹی کا جائزہ لینے کیلئے اعلیٰ سطحی اجلاس منعقد ہوا جس میں ایس پی آپریشنز جمیل اختر ،ایس پی انوسٹی گیشن جہانزیب خان ،زیر تربیت اے ایس پی ناصر محمود،تمام سرکل ایس ڈی پی اوز ، تھانوں کے ایس ایچ اوز اورٹریفک پولیس انچارج کے علاوہ دیگر متعلقہ پولیس فسران بھی شریک تھے۔

اجلاس میں عید الفطر کے ایام اور خصوصاً چاند رات کیلئے مرتب کردہ جامع سیکیورٹی پلان پر سختی سے عمل درآمد یقینی بنانے کے ا حکامات جاری کردئیے گئے ۔ پولیس اہلکاروں کی چھٹیاں منسوخ کرکے چوبیس گھنٹے شفٹوں میں ڈیوٹی دینے کی ہدایات جاری کردی گئی ہیںجبکہ کسی بھی ناخوشگوار صورتحال سے مئوثر طور پر نمٹنے کیلئے پولیس اور ایلیٹ فورس کی مشترکہ ریپڈ رسپانس دستوں کومزید متحرک اور الرٹ کرکے موبائل ،رائیڈرز اور پیادہ گشت بڑھا دئیے گئے ہیں۔

عید کے دنوں میں خریداری کے مراکز سمیت تمام بازاروں ،لاری اڈوں،،ریلوے سٹیشن اور دیگر عوامی مقامات پر غیر معمولی رش کو کنٹرول کرنے کیلئے مخصوص متبادل روٹس مقرر کردئیے گئے ہیں اورشہر کے پرہجوم مقامات پر ٹریفک کی روانی برقرار رکھنے کی خاطر ٹریفک پوائنٹس میں اضافہ کرکے اہلکاروں کی ڈیوٹی کا اوقات کار رات گئے تک بڑھا دیا گیا ہے ۔اجلاس کو بتایا گیا کہ عید الفطر کے موقع پر سیکیورٹی کے لحاظ سے حساس قرار دئیے گئے مقامات خصوصاً عید گاہوں ، عبادت گاہوں،شاپنگ پلازوں ، تجارتی مراکز اور تفریح گاہوں کی نگرانی کا عمل مزید سخت کیاجائے اور مطلوب اشتہاریوں،مشکوک افراد،آوارہ گردوںاور امن میں رخنہ اندازی کے مرتکب جرائم پیشہ عناصر کی سرکوبی کیلئے تمام وسائل بروئے کار لائے جائیں ۔

چاند رات پر ہوائی فائرنگ اور آتش بازی پر عائد پابندی کے سلسلے میں شہر میں اسلحے کی تمام دکانیں سیل کردی گئی ہیں اور لائسنس یافتہ اسلحے کی نمائش و آتش بازی کے ہر قسم کے سامان کی خرید وفروخت بھی قطعی طور پر ممنوع قرار دی گئی ہے۔ شہر کے تمام بازاروں،تجارتی مراکز اور خصوصاً خواتین کے خریداری کے مراکز میں ہر قسم کی گاڑیوں،رکشوں و موٹرسائیکلوں کے داخلے پر پابندی عائد کردی گئی ہے جبکہ خواتین کے بازاروں میں مردوں کا داخلہ ممنوع قرار دیا گیا ہے۔

۔ضلع کی محل وقوع کے اندر اہم شخصیات کی سیکیورٹی سمیت اہم شاہراہوں اور حساس تنصیبات کی کڑی نگرانی کیلئے بھی مئوثر اقدمات کئے گئے ہیں۔ اسی طرح نماز عید کے موقع پر شہر کے تمام چھوٹے بڑے عید گاہوں میں سیکیورٹی کے خصوصی انتظامات اور چیکنگ کے تناظر میں پولیس کی سپیشل گارد کیساتھ ساتھ حساس ادارے اور بم ڈسپوزل سکواڈکے ہلکار بھی تعینات رہیں گے جو کہ میٹل اور ایکسپلوزیو ڈیٹیکٹر کے ذریعے جامہ تلاشی کا عمل یقینی بنائیں گے۔

چاند رات پر ہوائی فائرنگ کی روک تھام کے حوالے سے ضلعی پولیس سربراہ عباس مجید خان مروت نے پولیس حکام کو ہدات کی کہ وہ عید کے ایام میں خصوصاً چاندرات پر ہوائی فائرنگ کے غیر اسلامی اور غیر قانونی فعل کے تدارک کیلئے اپنا پیشہ ورانہ کردار بھر پر طریقے سے ادا کریںاور کسی بھی رہائشی مکان سے ہوائی فائرنگ کی شکایت موصول ہونے پر قانون مختص الامر کی رو سے اس گھر کے ہر جوان العمر مرد کے خلاف قانونی کاروائی عمل میں لائی جائے ۔ضلعی پولیس سربراہ نے خبر دار کیا ہے کہ جس پولیس آفیسر کے علاقے میں چاند رات اور عید الفطر کے موقع پر ہوائی فائرنگ کی شکایت موصو ل ہوئی تو متعلقہ ایس ڈی پی اوز اور ایس ایچ اوز کے خلاف سخت محکمانہ کاروائی عمل میں لائی جائے گی۔