محترمہ بے نظیر بھٹو کوشہید نہ کیا جاتا تو اس وقت پاکستان کو جو حالات درپیش ہیں محترمہ کی سیاسی بصیرت و حسن تدبر سے یہ حالات پیدا ہی نہ ہوتے ،ْچودھری محمد یٰسین

اندرون و بیرون ملک عوام کے دلوں پر بے نظیر بھٹو کا جو نقش ثبت ہے اسے نہ تو مٹایا جاسکتا ہے اور نہ ہی ختم کیا جاسکتا ہے ،ْبینظیر بھٹوکے یوم ولادت کے موقع پر پیغام

بدھ جون 17:50

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 20 جون2018ء) اپوزیشن لیڈر آزاد کشمیر چودھری محمد یٰسین نے کہا ہے کہ ستائیس دسمبر 2007کو محترمہ بے نظیر بھٹو کوشہید نہ کیا جاتا تو اس وقت پاکستان کو جو مخدوش حالات درپیش ہیں محترمہ کی سیاسی بصیرت و حسن تدبر سے یہ حالات پیدا ہی نہ ہوتے وہ عظیم محب وطن خاتون اور پاکستان پیپلز پارٹی کی سربراہ قومی مفادات کے تقدس پر کسی قسم کی انچ نہ آنے دیتی۔

آج ان کے یوم ولادت پر سب سے افسردہ کشمیر کے محکوم عوام ہونگے جن کے حقوق کیلئے انہوں نے دنیا کے ہر فورم پر آواز بلند کی اور آل پارٹیز حریت کانفرنس کو کشمیری عوام کی نمائندہ تنظیم قرار دیتے ہوئے اسے اپنی پارٹی پالیسی کا جزو ٹھہرایا۔ محترمہ بے نظیر بھٹو کے یوم ولادت کے موقع پر اپنے پیغام میں انہوں نے کہا کہ شہید بی بی 2001 میں دہلی گئیں تو انہوں نے کشمیری عوام کے حق خودارادیت کے بارے میں پاکستان پیپلزپارٹی کے موقف کا برملا اظہار کیا۔

(جاری ہے)

چودھری محمد یٰسین نے مزید کہا کہ محترمہ نے دونوں پاک بھارت تعلقات کوبہتر بنانے کے لئے ہمیشہ اس امر پر زور دیا کہ کشمیر ایک بنیادی تنازع ہے جس نے دونوں ملکوں کو یرغمال بنا رکھا ہے۔ اس لئے ضروری ہے کہ اس کے حل کے لئے نئی سوچ اپنائی جائے۔ آج کشمیری ان کے اس دنیا میں نہ ہونے کو کس طرح محسوس کرتے ہیں یہ سب پر عیاں ہے۔ اندرون و بیرون ملک عوام کے دلوں پر بے نظیر بھٹو کا جو نقش ثبت ہے اسے نہ تو مٹایا جاسکتا ہے اور نہ ہی ختم کیا جاسکتا ہے۔ وہ پاکستان کے عوام کے دلوں پر حکومت کررہی ہیں ۔