انڈونیشیا کی جھیل میں مسافر کشتی الٹنے سے 200 افراد ڈوب کر ہلاک ،ْ 18 کو بچالیا گیا

حادثے کی وجہ گنجائش سے زیادہ افراد کو کشتی میں سوار کرنا تھا ،ْمسافروں کی تفصیلات دستیاب نہیں ہوسکیں ڈوب جانے والے افراد کی زندہ بچ جانے کے امکانات اب ختم ہوگئے ہیں ،ْ حکومتی ترجمان

جمعرات جون 17:00

انڈونیشیا کی جھیل میں مسافر کشتی الٹنے سے 200 افراد ڈوب کر ہلاک ،ْ 18 کو ..
سماٹرا(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 21 جون2018ء) انڈونیشیا کی جھیل میں مسافر کشتی الٹنے سے 200 افراد ڈوب کر ہلاک ہوگئے ،ْ 18 کو بچالیا گیا۔ عالمی میڈیا کے مطابق انڈونیشیا کے جزیرے سماٹرا سے منسلک دریائے ٹوبہ میں عید کی تعطیلات کی وجہ سیاحوں کی بڑی تعداد موجود تھی۔ تفریح کی غرض سے آنے والے سیاحوں کو جھیل کی سیر کرانے کے لیے مختص مسافر کشتی کے الٹنے سے 200 افراد ہلاک ہوگئے ،ْریسکیو اداروں نے امدادی کارروائی کرتے ہوئے 18 افراد کو بچالیا۔

(جاری ہے)

حادثے کی وجہ گنجائش سے زیادہ افراد کو کشتی میں سوار کرنا تھا۔ ایسی کشتی میں صرف 60 افراد کو بٹھایا جا سکتا ہے لیکن عید کی وجہ سے ہجوم زیادہ ہونے کے باعث کمپنی نے تین گنا زیادہ افراد کو سوار کرایا۔ کمپنی نے مسافروں کو ٹکٹ بھی جاری نہیں کیے جس کی وجہ سے مسافروں کی تفصیلات دستیاب نہیں ہوسکیں۔حکومت کے ترجمان کا کہنا ہے کہ ریسکیو اداروں نے لاپتا سیاحوں کی تلاش کا کام تاحال جاری رکھا ہوا ہے تاہم ڈوب جانے والے افراد کی زندہ بچ جانے کے امکانات اب ختم ہوگئے ہیں۔واضح رہے کہ دریائے ٹوبہ پر دنیا کی سب سے بڑی جھیل قائم ہے اور اس علاقے میں سیاحوں کی بڑی تعداد ا?تی ہے۔

متعلقہ عنوان :