راولپنڈی کینٹ میں واٹر ہائیڈرنٹس کی بندش کے بعد پانی بحران سنگین ہو گیا

وپے میں ملنے والے واٹر ٹینکر کی قیمت 5000روپے تک جا پہنچی، شہریوں کی پریشانی میں کئی گنا اضافہ

جمعرات جون 19:10

راولپنڈی ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 21 جون2018ء) راولپنڈی کینٹ میں واٹر ہائیڈرنٹس کی بندش کے بعد پانی بحران سنگین ہو گیا ، 2000روپے میں ملنے والے واٹر ٹینکر کی قیمت 5000روپے تک جا پہنچی ،شہریوں کی پریشانی میں کئی گنا اضافہ ہو گیا۔اے پی پی کو دستیاب اطلاعات کے مطابق راولپنڈی کنٹونمنٹ بورڈ نے سپریم کورٹ کے احکامات کی پیروی کرتے ہوئے غیر قانونی واٹر ہائیڈرنٹس کے خلاف دو روزہ کارروائی کے دوران 48غیر قانونی واٹر ہائیڈرنٹس سر بمہر کر دیئے۔

جس کے بعد راولپنڈی کینٹ میں پانی بحران مزید سنگین ہو گیا اور واٹر ٹینک مافیاکی چاندی ہو گئی۔ شہریوں نے قومی خبر ایجنسی کو بتایاکہ راولپنڈی کینٹ میں حالیہ موسم گرما کے آغاز سے ہی پانی کی قلت شروع ہو گئی تھی جس کے باعث شہریوں کو ٹینکرز منگوا کر اپنی ضروریات پوری کرنی پڑتی تھیں تاھم راولپنڈی کینٹ بورڈ نے گزشتہ روز واٹر ہائیڈرنٹس کے خلاف کارروائی کرتے ہوئے انہیں بند کرادیا جس کی وجہ سے ٹینکر مافیا نے دیگر علاقوں سے پانی لانے کو جواز بنا کر ٹینکر کی قیمتوں میں ہو شربا اضافہ کر دیا۔

(جاری ہے)

ایڈیشنل ایگزیکٹو آفیسر کینٹ ارسلان حیدر نے کینٹ میں پانی کی قلت اور واٹر ہائیڈرنٹس کی بندش کے حوالے سے پوچھے گئے سوال کے جواب میں ’’اے پی پی کو بتایاکہ کینٹ بورڈ انتظامیہ عدالت عظمیٰ کے احکامات کی تکمیل کے تحت واٹر ہائیڈرنٹس کے خلاف کارروائی کر رہی ہے ۔انہوں نے بتایاکہ خانپور ڈیم سے پانی کی سپلائی میں کمی اور کینٹ بورڈ کے ٹیوب ویلز میں واٹر لیول میں کمی کی وجہ سے کینٹ میں پانی بحران ہے تاھم شہریوں کی ضروریات پوری کرنے کے لیے راولپنڈی کینٹ بورڈ نے پہلے ہی واٹر راشننگ شروع کر رکھی ہے ۔

راولپنڈی کنٹونمنٹ بورڈ کے ترجمان قیصر محمود نے اے پی پی سے بات چیت کرتے ہوئے بتایاکہ عدالت عظمیٰ کے احکامات کی پیروی کرتے ہوئے کینٹ ایریاز میں غیر قانونی واٹر ہائیڈرنٹس کے خلاف دو روزہ کارروائی میں مجموعی طور پر48 غیر قانونی واٹر ہائیڈرنٹس کو سر بمہر کیا گیا ۔یہ کارروائی قاسم آباد ،نصیر آباد ،ڈھوک مستقیم ،سہام ،مکرم ٹائون ،رینج روڈ ،ذیشان کالونی ،مغل آباد ،ٹنچ بھاٹہ ،پیپلز کالونی ،دھمیال روڈ ،چمن آباد اور نیازی ٹائون میں کی گئی ۔

ترجمان نے بتایاکہ غیر قانونی واٹر ہائیڈرنٹس کے خلاف کارروائی سی سی او کینٹ سبطین رضا کی خصوصی ہدایات پر انفورسمنٹ سکواڈ اور واٹر برانچ نے افضل گوندل کی سربراہی میں کی گئی۔ اس موقع پر آپریشن کی نگرانی ایڈیشنل سی ای او ارسلان حیدر اور عمر معصوم نے کی۔ ذمہ دار ذرائع نے قومی خبر ایجنسی کو بتایاکہ غیر قانونی واٹر ہائیڈرنٹس کے خلاف کارروائی کے دوران کینٹ بورڈ کی ٹیم کو مزاحمت کا بھی سامنا کرنا پڑا جبکہ ڈھوک چوہدریاں میں کارروائی کے دوران مزاحمت پر واٹر ہائیڈرنٹ کے مالک افضال کے خلاف مقدمہ درج کروا دیا گیا۔

شہریوں نے عدالت عظمیٰ سے معاملے کا نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے اور کہاہے کہ کینٹ کی حدود میں واقع تمام غیر قانونی واٹر ہائیڈٖرنٹس کو سرکاری تحویل میں لے کر شہریوں کو پانی کی فراہمی یقینی بنائی جائے بصور ت دیگر کینٹ کے رہائشی ٹینکر مافیا کے ہاتھوں لٹتے رہیں گے ۔