ایڈن ہاؤسنگ میں اربوں کے فراڈ، پی ٹی آئی کا سابق چیف جسٹس افتخار چوہدری فیملی کیخلاف کارروائی کا مطالبہ

"ایڈن ہاؤسنگ" ملکی تاریخ کا بڑا سکینڈل ہے ، اس نے قومی خزانے کو اربوں کا نقصان پہنچایا، قومی احتساب بیورو کا کارروائی سے گریز چیئرمین اور ادارے کی ساکھ پر منفی اثرات مرتب کرے گا،افتخار چوہدری کیخلاف کارروائی کیلئے قوم کی نگاہیں قومی احتساب بیورو کی جانب اٹھ رہی ہیں، ترجمان پی ٹی آئی فواد چوہدری کا چیئرمین نیب کے نام خط

جمعہ جون 16:30

ایڈن ہاؤسنگ میں اربوں کے فراڈ، پی ٹی آئی کا سابق چیف جسٹس افتخار چوہدری ..
اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 22 جون2018ء) ایڈن ہاؤسنگ میں اربوں کے فراڈکے معاملے پرپاکستان تحریک انصاف نے سابق چیف جسٹس افتخار چوہدری،، صاحبزادی، داماد اور سمدھی کیخلاف کارروائی کا مطالبہ کر دیا،،چیئرمین نیب کے نام خط میں فواد چوہدری نے موقف اپنایا کہ "ایڈن ہاؤسنگ" ملکی تاریخ کا ایک بڑا سکینڈل ہے جس میں قومی خزانے کو اربوں کا نقصان پہنچایا، قومی احتساب بیورو کا کارروائی سے گریز چیئرمین اور ادارے کی ساکھ پر نہایت منفی اثرات مرتب کرے گا،،افتخار چوہدری کیخلاف کارروائی کیلئے قوم کی نگاہیں قومی احتساب بیورو کی جانب اٹھ رہی ہیں۔

جمعہ کو ایڈن ہاؤسنگ میں اربوں کے فراڈکے معاملے پرپاکستان تحریک انصافنے سابق چیف جسٹس افتخار چوہدری،، صاحبزادی، داماد اور سمدھی کیخلاف کارروائی کا مطالبہ کر دیا۔

(جاری ہے)

اس حوالے سے ترجمان پاکستان تحریک انصاف فواد چوہدرینیچیئرمین نیب کو خط لکھ دیا۔خط میں کہا گیا ہے کہ "ایڈن ہاؤسنگ" ملکی تاریخ کا ایک بڑا سکینڈل ہے۔ افتخار چوہدری،، انکی بیٹی، داماد اور سمدھی نے مبینہ طور پر قومی خزانے کو اربوں کا نقصان پہنچایا۔

معتبر ترین شواہد اور عدالت عظمٰی کے واضح احکامات کے باوجود افتخار چوہدری اور دیگر کیخلاف کارروائی سے گریز پر تشویش ہے۔ایڈن ہاؤسنگ میں بیواؤں، یتیموں اور غریب ملازمین کی جمع پونجی پر ہاتھ صاف کئے گئے۔۔افتخار چوہدری کیخلاف کارروائی کیلئے قوم کی نگاہیں قومی احتساب بیورو کی جانب اٹھ رہی ہیں۔قوم جاننا چاہتی ہے کہ آئینی طور پر باختیار ادارے نے اب تک افتخار چوہدری،، انکی صاحبزادی، داماد اور سمدھی کیخلاف کیا کارروائی کی۔

قومی احتساب بیورو کا کارروائی سے گریز چیئرمین اور ادارے کی ساکھ پر نہایت منفی اثرات مرتب کرے گا۔آئین کی بالادستی اور قانون کے یکساں نفاذ کے علاوہ تکریم کا کوئی رستہ نہیں۔۔چیئرمین نیب فوری طور پر اس معاملے کا نوٹس لیںاور ملکی تاریخ کے اس بڑے سکینڈل میں ملوث افراد کا انکی حیثیت کی بجائے جرم کی سنگینی کے اعتبار سے محاسبہ کیا جائے۔